ارتقائی منازل طے کرنے کے لئےحسینؑ ابن علیؑ سے عشق کرنا ضروری ہے، علامہ امین شہیدی

پاکستان کے ممتاز عالم دین نے کہاکہ  ماہِ محرم کے آغاز سے ہی ہمارا قلب درد و حزن کی کیفیت محسوس کرتا ہے۔ ہماری روح اس درد سے متصل ہو جاتی ہے اور جی نہیں چاہتا کہ خوشی کا اظہار کریں۔

مہر خبررساں ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق، امتِ واحدہ پاکستان کے سربراہ علامہ محمد امین شہیدی نے مسجد خدیجة الکبری بحریہ ٹاؤن راولپنڈی میں استقبال ماہِ محرم کی مجلس سے خطاب کیا۔انہوں نے سید الشہداء امام حسین علیہ السلام کے مصائب پر محزون ہونے اور گریہ کرنے کی وجوہات واثرات پر گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ اگرچہ تاریخِ انسانی ظلم کی داستانوں سے بھری پڑی ہے، یہاں تک کہ کئی انبیاء کو ان کی امت کے افراد نے دردناک طریقہ سے قتل کیا لیکن ان کے قتل پر ہم گریہ و ماتم نہیں کرتے؛تو پھرامام حسین علیہ السلام پر گریہ کرنے کی وجہ کیاہے، کیوں ہماری حالت دگرگوں ہوتی ہے اور ایام عزا کے دوران ہم ایک خاص قسم کی کیفیت کے زیرِ اثر رہتے ہیں ۔ان سوالات کا جواب یہ ہے کہ امام حسین علیہ السلام کی شہادت وہ غم ہے کہ جس نے پورے انسانی معاشرہ کو متغیر کیا ہے اور اس کے اثرات ہر گزرتے دن کے ساتھ عمیق تر نظر آتے ہیں۔ کسی بھی انسان کی موت پر غمزدہ ہونا انسانی فطرت ہے۔عیسائیوں کے عقیدہ کے مطابق حضرت عیسی علیہ السلام سینکڑوں سال قبل انتقال کر چکے ہیں ۔آج بھی ان کے یومِ وصال پر ویٹی کن سٹی میں لاکھوں کی تعداد میں عیسائی جمع ہوتے ہیں اور سکوت کے ذریعہ ان سے وابستگی اور احترام کا اظہار کرتے ہیں لیکن اس عمل کے نتیجہ میں ان کے اندر کوئی تبدیلی نظر نہیں آتی۔امام حسین علیہ السلام کی شہادت کا سوگ منانے کا مطلب محض سیاہ لباس میں ملبوس ہو کر کھڑے رہنے کا نام نہیں!

 ماہِ محرم کے آغاز سے ہی ہمارا قلب درد و حزن کی کیفیت محسوس کرتا ہے۔ ہماری روح اس درد سے متصل ہو جاتی ہے اور جی نہیں چاہتا کہ خوشی کا اظہار کریں۔ غمِ حسینؑ وہ کیفیت ہے جس سے انسان کی زندگی کا اسلوب تبدیل ہو جاتا ہے۔اس بات کی وضاحت کے لئےنبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا کلام بہترین مثال ہے جو ہماری احادیث کی معتبر کتابوں میں موجود ہے۔آپؐ فرماتے ہیں: ان لقتل الحسین حرارۃ فی قلوب المؤمنین لا تبرد ابدا۔اللہ نے ایک ایسا شعلہ اہلِ ایمان کے قلوب میں پیدا کر دیا ہے کہ جب کسی صاحبِ ایمان شخص کو قتلِ حسینؑ کی خبر پہنچتی ہے تو اس کی حرارت اُس کے دل میں ہمیشہ کے لئےزندہ ہو جاتی ہے۔یعنی اللہ تعالی نے حسینؑ ابن علیؑ کے لئے ایک خاص اہتمام کیا ہےجس کی وجہ سے نبی کریمؐ نے یہ حدیث ارشاد فرمائی۔

علامہ امین شہیدی نے"مودتِ حسینؑ "کوانسان کے ارتقاء کا معیار قرار دیتے ہوئے کہا کہ روح کے زندہ ہونے کے لئے ضروری ہے کہ وہ ان باتوں پر ردِ عمل ظاہر کرے جن میں اللہ کی چاہت شامل ہو۔جسم کی نسبت روح کی ضروریات کا تعلق انسانیت سے ہے۔ہوسکتا ہے کہ ہم میں سے بہت سے لوگ جسمانی طور پر زندہ لیکن روحانی طور پر مردہ ہوں۔ انسانی زندگی دراصل الہی زندگی ہے جس کے بارے میں اللہ تعالی نے قرآن مجید میں کہا ہےکہ وہ لوگ جو ان باتوں پر ایمان لائے، جن کی اللہ کے رسولؐ نے دعوت دی ہے تویہ دعوت انہیں زندہ کر دے گی۔ یہ خطاب دراصل زندہ انسانوں سے ہے، مُردوں سے نہیں۔ اسی طرح حسینؑ ابن علیؑ کو دل میں بسانے کے لئے جس زندگی کی ضرورت ہے وہ مادی و بدنی زندگی نہیں ہے۔یہ وہ زندگی ہے جس میں روح زندہ ہواورجس کی روح زندہ ہے، وہ امام حسینؑ سے وابستہ ہے۔ جس شخص کی زندگی ملکوتی ہے، اس کا عشق اور محور و مرکز حسینؑ ابن علیؑ کی ذات ہے۔اس پاکیزہ زندگی کا اثر مادی زندگی سےیکسر مختلف ہے۔ یاد رکھئے کہ ارتقائی منازل طے کرنے کے لئےحسینؑ ابن علیؑ سے عشق کرنا ضروری ہےاور اس سفرکی پرواز کے لئے جو پَر درکار ہیں ان کا نام "مودتِ علیؑ و آلِ علیؑ" اور "مودتِ حسینؑ" ہے۔

News Code 1911775

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • captcha

    تبصرے

    • IR 21:26 - 2022/07/31
      0 0
      ماشاءاللہ