پاکستان اور ایران کا دوطرفہ تجارت کا حجم پانچ ارب ڈالر تک بڑھانے کا فیصلہ

پاکستان کے دارالحکومت اسلام آباد میں پاکستانی وزیراعظم نوازشریف اور ایرانی صدرحسن روحانی میں پہلے ون آن ون ملاقات ہوئی اور پھر وفود کی سطح پر مذاکرات ہوئے جس میں دہشت گردی، اقتصادی تعاون بڑھانے سمیت اہم معاملات پر بات چیت کی گئی اور دونوں ممالک کے حکام نے تجارت کے حجم کو پانچ ارب ڈالر تک بڑھانے کے 6 معاہدوں پر دستخط کئے۔

مہر خبررساں ایجنسی نے پاکستانی ذرائع کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ پاکستان کے دارالحکومت اسلام آباد میں پاکستانی وزیراعظم نوازشریف اور ایرانی صدرحسن روحانی میں پہلے ون آن ون ملاقات ہوئی اور پھر وفود کی سطح پر مذاکرات ہوئے جس میں دہشت گردی، اقتصادی تعاون بڑھانے سمیت اہم معاملات پر بات چیت کی گئی اور دونوں ممالک کے حکام نے تجارت کے حجم کو پانچ ارب ڈالر تک بڑھانے کے 6 معاہدوں پر دستخط کئے۔ اسلامی جمہوریہ ایران کے صدر حسن روحانی نے کہا کہ پاکستانی قیادت کے ساتھ مسائل کے حل سمیت مختلف امورپربات چیت ہوئی، دونوں ملکوں کے درمیان اقتصادی تعاون بڑھانے کے وسیع مواقع موجود ہیں جب کہ قدرتی وسائل کے شعبے میں تعاون کو مزید فروغ دیا جاسکتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ دونوں ممالک دہشتگردی کے خلاف پر عزم ہیں اور دہشت گردی کے خلاف مل کر کام کررہے ہیں جب کہ دونوں ملکوں کی سرحدیں محفوظ ہونے سے ہی ترقی ممکن ہے۔ ایرانی صدر نے کہا کہ پاکستان کی سلامتی ہماری سلامتی ہے جب کہ پاکستان اور ایران تعلقات کو مزید فروغ دینے کیلیے پرعزم ہیں۔ اس موقع پر پاکستان کے وزیراعظم نوازشریف نے ایرانی صدرکو پاکستان آمد پرخوش آمدید کہتے ہوئے کہا کہ دونوں ملکوں کے درمیان گہرے برادرانہ تعلقات ہیں اور توقع ہے ایرانی قوم صدر روحانی کی قیادت میں ترقی کرے گی اور دوطرفہ تعلقات مضبوط ترہوتے جائیں گے جس سے دونوں ممالک کےعوام کوفائدہ پہنچے گا۔ انہوں نے کہا کہ مذاکرات میں تمام شعبوں میں تعاون بڑھانے پر بات چیت ہوئی، باہمی تعاون کو توانائی کے شعبے سمیت تمام شعبوں میں فروغ دیا جائے گا، پاکستان، ایران کے درمیان 2 سرحدی کراسنگ پوائنٹس بنائے جائینگے جب کہ سرحدی تعلقات سےعوامی، اقتصادی ،تجارتی روابط کو فائدہ پہنچے گا۔ایرانی صدرحسن روحانی کا پہلا دورہ پاکستان ہے جب وہ اسلام آباد پنہچے تو پاکستان کے وزیراعظم نوازشریف نے نورخان ایئربیس پر ان کا خود استقبال کیا، ایرانی صدر کو اکیس توپوں کی سلامی دی گئی اور وزیراعظم ہاؤس پہنچنے پر معززمہمان کو گارڈ آف آنر پیش کیا گیا۔ اس موقع پر ایرانی كابینہ كے اراكین و دیگر اعلیٰ حكام اور تاجروں كا اعلیٰ سطح کا وفد بھی ان كے ان کے ہمراہ ہے۔

News Code 1862812

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 3 + 6 =