سعودی عرب کے ولیعہد محمد بن سلمان کی اسرائیلی وزير اعظم سے ملاقات

سعودی عرب کے ولیعہد محمد بن سلمان کی صہیونیوں کے ساتھ سازباز اور اسلام و مسلمانوں کے خلاف گھناؤنی سازش کا سنسنی خیز انکشاف ہوا ہے جس ميں سعودی عرب کے ولیعہد محمد بن سلمان اور امارات کے حکام نے صہیونی وزير اعظم نیتن یاہو کے ساتھ ملاقات اور گفتگو کی ہے۔

مہر خبررساں ایجنسی نے غیر ملکی ذرائع کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ سعودی عرب کے ولیعہد محمد بن سلمان کی صہیونیوں کے ساتھ سازباز اور اسلام و مسلمانوں کے خلاف گھناؤنی سازش کا سنسنی خیز انکشاف ہوا ہے جس ميں سعودی عرب کے ولیعہد محمد بن سلمان اور امارات کے حکام نے صہیونی وزير اعظم نیتن یاہو کے ساتھ ملاقات اور گفتگو کی ہے۔اطلاعات کے مطابق اسرائیلی وزیراعظم سے سعودی عرب کے ولی عہد محمد بن سلمان سے خفیہ ملاقات کا انکشا ف ہوا ہے ، نیتن یاہو کی اماراتی حکام سے بھی خفیہ ملاقاتوں اور روابط کا انکشاف سامنے آیا ہے ،اسرائیلی ذرائع کے مطابق نیتن یاہو اورسعودی شہزادہ محمد بن سلمان کے درمیان جمعہ کے روز عمان میں خفیہ ملاقاتیں ہوئیں ، دونوں رہنمائوں کے درمیان اردن کے دارالحکومت میں واقع شاہی محل میں ملاقات ہوئی ، یہ ملاقات وائٹ ہائوس کے مشیر خاص جیرڈ کوشنر اور مشرق وسطیٰ کے لئے امریکی سفیر جیسن گرین بیلٹ کے دورہ عمان کے موقع پر ہوئی ، رپورٹ کے مطابق سعودی ولیعہد محمد بن سلمان اور اسرائیلی وزیراعظم کے درمیان ملاقاتیں اردن کے شاہ عبداللہ کی موجودگی اور ان کے بغیر بھی ہوئیں ، دوسری جانب اسرائیلی وزیراعظم کے اماراتی حکام سے خفیہ ملاقاتوں اور روابط کا بھی انکشاف ہوا ہے ،

نیویارکر نامی اخبار کے رپورٹر کے مطابق امریکی انٹیلی جنس ایجنسیز کواماراتی عہدیداران اور اسرائیلی حکام کے درمیان فون کالز کے بارے میں معلوم ہوا ہے جبکہ ان میں سے ایک فون کال امارات کے ایک سینئر عہدیدار اور نیتن یاہو کے درمیان تھی ، رپورٹ کے مطابق ہلیری کلنٹن بطور صدارتی امیدوار اور بطور وزیر خارجہ اس معاملے سے آگاہ تھیں کہ متحدہ عرب امارات اور سعودی عرب ایران کے اثر روسوخ کو کم کرنے کے لئے اسرائیلی انٹیلی جنس ایجنسی موساد سے رابطے میں ہیں ،امریکی صحافی نے انٹیلی جنس اداروں کے حوالے سے بتایا کہ متحدہ عرب امارات اور اسرائیل کے عہدیدار وں کے درمیان ملاقات یونان میں ہوئی تھی ۔ واضح رہے کہ اسرائیل کے وزیراعظم نیتن یاہو نے اردن کے بادشاہ سے ملاقات میں واضح کیا کہ وہ بیت المقدس کی انتظامی صورت حال کو برقرار رکھنے کے حامی ہیں۔ اس ملاقات کی تصدیق اسرائیلی وزیراعظم کے دفتر سے جاری ہونے والے ایک بیان میں کی گئی ہے۔ شاہ عبداللہ ثانی کے ساتھ اسرائیلی وزیراعظم کی ملاقات تقریباً ایک سال بعد ہوئی ہے۔ عرب ذرائع کے مطابق سعودی عرب کی فلسطینیوں کے خلاف سازش کا بھی انکشاف ہوا ہے سعودی عرب مسلم ممالک میں عدم استحکام پیدا کرنے کے سلسلے میں اسرائیل اور امریکہ کو بھر پور تعوان فراہم کررہا ہے۔عرب ذرائع نے حرمین الشریفین پر آل سعود کے ذریعہ یہودیوں کے قبضہ کا خدشہ ظآہر کیا ہے۔  سعودی رعب بیت المقدس کو اسرائیل کے حوالے کرنے کے لئے تیار ہے اور اس سلسلے میں وہ دیگر عرب حکام کو منانے کی کوشش کررہا ہے۔

News Code 1881644

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 6 + 1 =