امریکہ نے جاپان کے اعلیٰ حکام اور کمپنیوں کی بھی جاسوسی کی

ویکی لیکس نے اپنی تازہ رپورٹ میں انکشاف کیا ہے کہ امریکہ نے اپنے اتحادی برطانیہ اور جرمنی کے بعد اپنےایک اور اہم اتحادی ملک جاپان کے اعلیٰ حکام اور کمپنیوں کی بھی جاسوسی کی ہے۔

مہر خبررساں ایجنسی نے غیر ملکی ذرائع کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ ویکی لیکس نے اپنی تازہ رپورٹ میں انکشاف کیا ہے کہ امریکہ نے اپنے اتحادی  برطانیہ اور جرمنی کے بعد  اپنےایک اور اہم اتحادی ملک جاپان کے اعلیٰ حکام اور کمپنیوں کی بھی جاسوسی کی ہے۔ اطلاعات ویکی لیکس نے اپنی ویب سائٹ پر امریکہ سے متعلق جو تارہ ترین خفیہ دستاویزات شائع کی ہیں اس کے مطابق امریک خفیہ ایجنسی (این ایس اے) 2006 سے جاپان کی اہم سرکاری و سیاسی شخصیات اور 35 کمپنیوں کی خفیہ نگرانی کر رہی تھی۔ این ایس اے نے امریکہ اور جاپان کے دو طرفہ تعلقات، تجارت کے فروغ کے لیے طے پانے والے معاملات اور ماحولیاتی تبدیلیوں کے مقابلے کے لیے اختیار کی جانے والی حکمتِ عملی جیسے معاملات کی خفیہ نگرانی کی جب کہ جاپانی اداروں کی معلومات آسٹریلیا، برطانیہ، کینیڈا اور نیوزی لینڈ سمیت اپن" انٹیلی جنس شراکت دارو"  کو بھی فراہم کیں۔ ادھر جاپان کی وزارتِ خارجہ کے ترجمان یاسو ہیسا کاوامورا کا کہنا ہے کہ ویکی لیکس کے انکشافات کے بعد اس حوالے سے امریکہ سے مسلسل رابطے میں ہیں، جاپانی حکومت اپنی معلومات کے تحفظ کے لیے تمام ضروری اقدامات کرنے کا سلسلہ جاری رکھے گی۔واضح رہے کہ امریکا کی جانب سے اپنے اتحادی ملکوں کے سربراہان، اعلیٰ حکام اور اہم اداروں کی خفیہ نگرانی کا معاملہ سب سے پہلے 2013 میں منظر عام پر آیا تھا جب این ایس اے کے سابق ملازم ایڈورڈ سنوڈن نے امریکی خفیہ ایجنسی کی ہزاروں خفیہ دستاویزات انٹرنیٹ پر شائع کر دی تھیں۔ 2 ماہ قبل وکی لیکس نے این ایس اے کی جانب سے فرانس کے موجودہ صدر اور 2 سابق صدور کی جاسوسی کا بھی انکشاف کیا تھا جس کے بعد واشنگٹن اور فرانس کے درمیان معاملات کشیدہ بھی ہو گئے تھے جب کہ اس سے قبل جرمنی اور دیگر یورپی ممالک کی جانب سے بھی اس حوالے سے سخت رد عمل کا اظہار کیا گیا تھا۔

News Code 1857068

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 5 + 1 =