ایرانی سائنسدانوں نے جانوروں کی انواع کی شناخت کا طریقہ ڈھونڈ لیا

ایرانی حیاتیاتی ریسورس سینٹر کے ہیومن اینڈ اینیمل سیل بینک کے محققین نے متعدد تحقیقی مقالات کے مطالعے اور تلخیص کے ذریعے جانوروں کی انواع کی شناخت کے لیے مائٹوکونڈریل جینز کو مالیکیولر مارکر کے طور پر متعارف کرایا ہے۔

مہر خبر رساں ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق، ایران کے حیاتیاتی علوم پر تحقیقی ادارے بائیولوجکل ریسورس سینٹر کے ہیومن اینڈ اینیمل سیل بینک کے محققین نے متعدد تحقیقی مقالات کے مطالعے اور تلخیص کے ذریعے جانوروں کی انواع کی شناخت کے لیے مائٹوکونڈریل جینز کو مالیکیولر مارکر کے طور پر متعارف کرایا ہے۔

چونکہ ٹارگیٹ سیمپل کی ایک چھوٹی سی مقدار سے انواع کی شناخت ایک چیلنج کا باعث بنتی ہے، سائنسدانوں نے جدید طریقہ تلاش کرنے کے لیے مائٹوکونڈریل جین کی کاپیاں استعمال کرنے کے مختلف طریقوں کی چھان بین کی۔

فنانشل ٹریبیون نے رپورٹ کیا کہ بین الاقوامی جریدے دی نیوکلئس میں شائع ہونے والا جائزہ مضمون ہیومن اینڈ اینیمل سیل بینک کی مرکزی محقق ڈاکٹر زہرہ الیاسی گرجی نے اپنے ساتھیوں کے ساتھ تیار کیا تھا۔

مائٹوکونڈریل جینز (جسے مائٹوکونڈریل ڈی این اے بھی کہا جاتا ہے) سرکلر کروموسوم ہیں جو سیلولر آرگنیلز کے اندر پائے جاتے ہیں جنہیں مائٹوکونڈریا کہتے ہیں۔ ان جینز کو توانائی کے کارخانوں اور پاور ہاؤسز کے طور پر جانا جاتا ہے جو سیل کے اہم توانائی لے جانے والے مالیکیول کو تیار کرتے ہیں جسے اڈینوسین ٹرائی فاسفیٹ کہتے ہیں۔

News Code 1914140

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • captcha