دماغ کو تیز رکھنے کے پانچ اہم طریقے

طبی ماہرین کی جدید تحقیق کے مطابق دماغ کو سمجھنے اور اسے تیز رکھنے کے بہت سے طریقے دریافت کئے گئےہیں جو بڑے پیمانے پر مؤثر ثابت ہوئے ہیں۔

مہر خبررساں ایجنسی نے غیر ملکی ذرائع کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ طبی ماہرین کی جدید تحقیق کے مطابق دماغ کو سمجھنے اور اسے تیز رکھنے کے بہت سے طریقے دریافت کئے گئےہیں جو بڑے پیمانے پر مؤثر ثابت ہوئے ہیں۔آپ کی عمر خواہ 25 سال ہویا 65 سال ہو یہ 5 طریقے نہ صرف حیرت انگیز نتائج مرتب کرتے ہیں بلکہ بڑھاپے میں نسیان ، ڈیمنشیا اور دیگر تکلیف دہ امراض کو بھی دور کرنے میں مددگار ثابت ہوتے ہیں۔ ماہرین نے 5 ایسے طریقے وضع کیے ہیں جو دماغ کو تیز رکھ سکتے ہیں۔

چھوٹی کامیابیوں پر بھی خود کو مبارک باد دیں

اسٹینفرڈ یونیورسٹی کے ماہرین کا کہنا ہےکہ کسی بڑی کامیابی سے بہتر وہ چھوٹی چھوٹی کامیابیاں ہوتی ہیں جو تواتر سے ملتی رہیں، دماغ خیالی کامیابی اور حقیقی کامیابی کے درمیان مشکل سے ہی تمیز کرتا ہے۔ ماہرین کے مطابق ناکامی اورکامیابی دونوں ہمارے جذبات اور احساسات پر بہت گہرا اثر ڈالتے ہیں، صبح کے وقت کسی کامیابی کا تصور پورے دن آپ پر مثبت اثر ڈالتا ہے اور پرجوش مسرت اور اس کا احساس آپ کے دماغ پر گہرا اثر ڈالتا ہےاس لیے صبح اٹھتے ہی اپنی کامیابیوں کو یاد کریں اور خوشیوں کا تصور اپنے ذہن میں لائیں۔

جسم کو متحرک رکھیں:

جسمانی مشقت اور بھاگ دوڑ دماغ کے لیے ایندھن کا درجہ رکھتی ہےاس لیے قریباً تمام دماغی ماہرین اس امر پر متفق ہیں کہ ورزش دماغ اور اس کے افعال کو جوان رکھتی ہیں۔ ماہرین کا کہنا ہےکہ سادہ انداز میں ورزش کرنے سے دماغ سمیت پورے بدن میں خون کی روانی بڑھ جاتی ہے اور دماغ کو زیادہ آکسیجن ملتا ہے جو پورے دماغ کی کارکردگی بہتر کرتا ہے۔ ماہرین متقق ہیں کہ ورزش سے دماغ فروغ پاتا ہے اور اس سے دماغی خلیات بڑھنے لگتے ہیں اور نیورون کے راستے بہتر ہونے لگتے ہیں، اس طرح دماغ لچکدار ہوتا جاتا ہے اور اس کی تمام صلاحیتیں اچھی ہونے لگتی ہیں۔

دماغ کے پٹھوں کی ورزش:

جسم کے دیگر اعضا اور پٹھوں (مسلز) کی طرح بھی دماغ کو استعمال نہ کیا جائے تو یہ کمزور پڑنے لگتا ہے اسی لیے دماغ کو تندرست رکھنے کے لیے دماغی ورزش ضروری ہے۔ میسا چیوسیٹس انسٹی ٹیوٹ آف ٹیکنالوجی کی خاتون ماہر کا کہنا ہےکہ دماغ کے مختلف حصوں کو نظر میں رکھتے ہوئے اس کے پٹھوں پر زور ڈال کر دماغی ورزش کریں جن میں معمے حل کرنا، نئی زبانیں سیکھنا، موسیقی کے نئے آلات بجانا اور جوکر کے کرتب تک شامل ہیں۔

سیدھے بیٹھیں:

گھر میں مہمانوں کی آمد پر والدین ہمیشہ بچوں پر زور دیتے ہیں کہ سیدھے بیٹھو۔ سیدھے بیٹھنے سے جسم میں توانائی آتی ہے اور موڈ بہتر ہوتا ہے۔ یہ عمل خود اعتمادی کو بھی ظاہر کرتا ہے جو 2013 میں ہارورڈ کی ایک تحقیق سے بھی ثابت ہے۔ اگر بیٹھنے کا عمل بہت برا ہو تو یہ بے دلی اور عدم اعتماد کو ظاہر کرتا ہے جس کا اثر دماغ پر بھی پڑتا ہے۔  ایک اور تجربے سے ثابت ہوا ہے کہ جو لوگ درست انداز میں نہیں بیٹھتے وہ مایوس سوچ اور ڈپریشن کے شکار زیادہ ہوسکتے ہیں کیونکہ ہم اپنے رویئے کا 90 فیصد اظہار اپنی جسمانی پوزیشن اور حرکات سے کرتے ہیں۔ اس ضمن میں سان فرانسسکو اسٹیٹ یونیورسٹی میں نفسیات کے پروفیسر کا کہنا ہےکہ آپ کہیں بھی ہوں ہر گھنٹے بعد آپ اپنے بیٹھنے کا انداز چیک کریں اور خود کو سیدھا رکھنے کی کوشش کریں۔

موبائل فون کو اپنے سر سے دور رکھ کر سوئیں:

اسمارٹ فون دماغ کو متاثر کرسکتا ہے یا نہیں اس پر بہت کچھ کہا جاچکا ہے اور بہت سی تحقیق ہوتی رہی ہے۔ بعض ماہرین کے مطابق ٹیبلٹ اور فون سے خارج ہونے والی نیلی لائٹ نیند کو متاثر کرتی ہے اور نیند کے دورانیے کو متاثر کرتی ہیں۔ اس لیے ماہرین مشورہ دے رہے ہیں کہ سوتے وقت موبائل فون کو خود سے دور کردیں۔

News Code 1862289

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 1 + 3 =