قطر کا طالبان کی حکومت کو فوری طور پر تسلیم نہ کرنے کا فیصلہ

قطر کے وزیرِ خارجہ شیخ محمد بن عبدالرحمان آل ثانی نے فوری طور پر طالبان حکومت کو تسلیم کرنے کے امکان کو رد کرتے ہوئے کہا ہے کہ طالبان کو اپنے مثبت بیانات اور وعدوں پر عمل کرنا چاہیے۔

مہر خبررساں ایجنسی نے الجزیرہ کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ قطر کے وزیرِ خارجہ شیخ محمد بن عبدالرحمان آل ثانی نے فوری طور پر طالبان حکومت کو تسلیم کرنے کے امکان کو رد کرتے ہوئے کہا ہے کہ طالبان کو اپنے مثبت بیانات اور وعدوں پر عمل کرنا چاہیے۔ 

اطلاعات کے مطابق قطر کے وزیر خارجہ محمد بن عبدالرحمان آل ثانی نے افغانستان میں طالبان کے کنٹرول حاصل کرنے کے بعد پہلی بار افغانستان کا دورہ کیا۔ یہ کسی بھی غیر ملکی سفارت کار کا طالبان حکومت میں پہلا دورہ ہے۔

قطر کے وزیرخارجہ نے اپنے دورے میں طالبان  وزیرِ اعظم ملّا محمد حسن اخوند سمیت اہم حکومتی عہدیداروں کے علاوہ سابق صدر حامد کرزئی اور قومی مصالحتی کونسل کے سربراہ عبداللہ عبداللہ سے بھی ملاقات کی اور نئی حکومت کے حوالے سے تبادلہ خیال کیا۔

قطر کے وزیر خارجہ محمد بن عبدالرحمان آل ثانی کے اتوار کے روز اس اہم دورے کی تفصیلات منظر عام پر نہیں آئی ہیں لیکن آج قطر کے وزیر خارجہ  نے فرانسیسی وزیرِ خارجہ لودریان کے ساتھ میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے ایک سوال کے جواب میں کہا کہ اس وقت طالبان کی حکومت کو تسلیم کرنا ہماری پہلی ترجیح نہیں ہے بلکہ اس سے زیادہ اہم بات یہ ہے کہ طالبان دنیا کے ساتھ کس طرح کے تعلقات استوار کرتے ہیں۔ قطر کے وزیر خارجہ کے مطابق انھوں نے طالبان پر واضح کیا کہ اپنے مثبت بیانات اور وعدوں پر قائم رہ کر ہی وہ عالمی دنیا کا اعتماد حاصل کرسکتے ہیں اور خواتین کی شمولیت کے ساتھ قومی حکومت کا قیام اس کی پہلی کڑی ہوگی۔ واضح رہے کہ اس سے قبل فرانس کے صدر میکرون اور وزیر خارجہ دونوں نے طالبان پر جھوٹ بولنے کا الزام عائد کرتے ہوئے کہا تھا کہ فرانس طالبان کی حکومت کو تسلیم نہیں کرےگا۔

News Code 1908156

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 2 + 2 =