پاکستانی سپریم کورٹ کا مندر پر حملےميں ملوث افراد کو گرفتار کرنے کا حکم

پاکستانی سپریم کورٹ نے رحیم یار خان میں مندر پر حملے کے ملزمان کو فوری گرفتار کرنے کا حکم دیدیا ہے۔

مہر خبررساں ایجنسی نے ڈیلی پاکستان کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ پاکستانی سپریم کورٹ نے رحیم یار خان میں مندر پر حملے کے ملزمان کو فوری گرفتار کرنے کا حکم دیدیا ہے۔ پاکستان سپریم کورٹ میں رحیم یار خان مندر حملہ از خود نوٹس کیس کی سماعت ہوئی۔ آئی جی پنجاب ، چیف سیکرٹری پنجاب ، ایڈیشنل ایڈووکیٹ جنرل عدالت میں پیش ہوئے۔

چیف جسٹس نے آئی جی پنجاب انعام غنی اور چیف سیکرٹری کی سرزنش کرتے ہوئے کہا کہ مندر پر حملہ ہوا،انتظامیہ اور پولیس کیا کر رہی تھی۔ آئی جی پنجاب نے بتایا کہ اے سی اور اے ایس پی موقع پر موجود تھے، انتظامیہ کی ترجیح مندر کے آس پاس 70 ہندوؤں کے گھروں کا تحفظ تھا، مقدمہ میں دہشت گردی کی دفعات لگائی ہیں، تاہم ابھی تک کوئی گرفتاری نہیں ہوئی۔

چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ ایک 9 سال کے بچہ کیوجہ سے یہ سارا واقعہ ہوا، جس سے پوری دنیا میں پاکستان کی بدنامی ہوئی، پولیس نے ماسوائے تماشہ دیکھنے کے کچھ نہیں کیا۔ ایڈیشنل اٹارنی جنرل سہیل محمود نے بتایا کہ وزیر اعظم نے بھی معاملہ کا نوٹس لے لیا ہے۔

جسٹس قاضی امین نے کہا کہ پولیس اپنی ذمہ داری ادا کرنے میں ناکام ہوئی، سرکاری پیسہ سے مندر کی تعمیر کی جائے۔ چیف جسٹس نے کہا کہ ہندوؤں کا مندر گرا دیا،سوچیں ان کے دل پر کیا گزری ہو گی، سوچیں مسجد گرادی جاتی تو مسلمانوں کا کیا ردعمل ہو تا۔

سپریم کورٹ نے مندر حملے کے ملزمان کو فوری گرفتار کرنے، شرپسندی پر اکسانے والوں کیخلاف کارروائی اور مندر بحالی کے اخراجات بھی ملزمان سے ہر صورت وصول کرنے کا حکم دیا۔ سپریم کورٹ نے کہا کہ دندناتے پھرتے ملزمان ہندو کمیونٹی کیلئے مسائل پیدا کر سکتے ہیں، یقینی بنایا جائے کہ آئندہ ایسے واقعات نہ ہوں۔

News Code 1907679

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 7 + 8 =