بھارت میں کسانوں کا احتجاج 36ویں روز بھی جاری ہے

بھارت میں کسانوں کا احتجاج 36ویں روز بھی جاری ہے، بھارتی حکومت اور کسانوں کے درمیان مذاکرات کے اب تک 6 دورناکام ہوچکے ہیں۔ مذاکرات کا اگلا دور 4 جنوری کو ہوگا۔

مہر خـبررساں ایجنسی نے بھارتی ذرائع کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ بھارت میں کسانوں کا احتجاج 36ویں روز بھی جاری ہے، بھارتی حکومت اور کسانوں کے درمیان مذاکرات کے اب تک 6 دورناکام ہوچکے ہیں۔ مذاکرات کا اگلا دور 4 جنوری کو ہوگا۔ اطلاعات کے مطابق جمعہ کو سنگھو بارڈر پر 80 کسان تنظیموں کی میٹنگ ہوگی، کسان میٹنگ میں 4 جنوری کو حکومت کیساتھ ہونے والے مذاکرات کا ایجنڈا تیار ہوگا۔

کیرالہ اسمبلی میں تین زرعی قوانین کے خلاف قرارداد منظور کر لی گئی ہے جس میں کہا گیا ہے کہ حکومت کسانوں کےحقیقی خدشات کو سنے اور تینوں زرعی قوانین کو واپس لے۔

ادھر کسان تحریک کے سبب سنگھو، اوچندی، پیاؤ منیاری، سبولی اور منگیش بارڈر بند کردیے گئے ہیں، عوام کو متبادل راستہ اختیار کرنے کی ہدایات جاری کردی گئی ہیں۔ ہریانہ کسان کمیٹی 5 جنوری کو ہریانہ سے سنگھو بارڈر تک ٹریکٹر مارچ کرے گی۔

راجستھان سے ہریانہ جانے کے خواہشمند کسانوں کے راستے پر پولیس نے رکاوٹیں لگادیں، جس پر پولیس اور کسانوں کے درمیان جھڑپیں ہوئی ہیں، پولیس نے کسانوں پر آنسو گیس کی شیلنگ کی۔

News Code 1904620

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 9 + 4 =