کینیڈا میں چائلڈ پورنوگرافی کے خلاف کارروائی/ 400 بچے بازیاب،348 افراد گرفتار

کینیڈا میں بچوں کیساتھ زیادتی کی براہ راست فلم بندی کے مکروہ دھندے میں ملوث " انٹرنیشنل چائلڈ پورنوگرافی " گروہ کے خلاف کامیاب کارروائی میں 400 بچوں کو بازیاب کرالیا گیا ہے جب کہ گروہ میں شامل اسکول ٹیچرز، مذہبی شخصیات اور ڈاکٹرز سمیت 348 کارندوں کو گرفتار کیا گیا ہے۔

مہر خبررساں ایجنسی نے غیر ملکی ذرائع کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ کینیڈا میں بچوں کیساتھ زیادتی کی براہ راست فلم بندی کے مکروہ دھندے میں ملوث " انٹرنیشنل چائلڈ پورنوگرافی "  گروہ کے خلاف کامیاب کارروائی میں 400 بچوں کو بازیاب کرالیا گیا ہے جب کہ گروہ میں شامل اسکول ٹیچرز، مذہبی شخصیات اور ڈاکٹرز سمیت 348 کارندوں کو گرفتار کیا گیا ہے جن سے بچوں سے زیادتی اور تشدد کی 45 ٹیٹرا بائٹس کے حجم کی تصاویر اور ویڈیوز برآمد ہوئی ہیں۔

اطلاعات کے مطابق کینیڈا میں ٹورنٹو کی انسداد جنسی زیادتی پولیس فورس نے اپنے جاسوسوں کی مدد سے چائلڈ پورنوگرافی کے عالمی نیٹ ورک کا پتہ لگایا اور دیگر شعبوں کے ساتھ مل کر ایک گرینڈ آپریشن میں 348 کارندوں کو گرفتار کرلیا ہے جس کے دوران ہوشربا انکشافات ہوئے تھے۔ اس نیٹ ورک کے مرکزی ملزم برائن وے کو عمر قید کی سزا سنائی گئی ہے۔

ٹورنٹو پولیس کی لیزا بیلانگر نے بتایا کہ زیر حراست ملزمان میں 40 اسکول اساتذہ، 9 ڈاکٹرز اور نرسیں،  قانون نافذ کرنے والے ادارے کے 6 اہلکار، 9 مذہبی شخصیات اور 3 رضاعی والدین شامل ہیں۔ گرفتار ہونے والے ملزمان کا تعلق کینیڈا اور امریکہ سمیت 10 دیگر ممالک سے تھا۔

ملزمان سے بچوں کیساتھ جنسی زیادتی اور ان پر بہیمانہ تشدد کی ہزاروں ویڈیوز اور تصاویر برآمد ہوئی ہیں جن کا حجم 45 ٹیٹرا بائٹس ہے۔  صرف ایک سابق اسکول ٹیچر کے گھر سے 3 لاکھ 50 ہزار تصاویر اور 9 ہزار ویڈیوز ملی ہیں۔

اس آپریشن کے دوران انکشاف ہوا ہے کہ چائلڈ پورنو گرافی 4 ملین ڈالر کی مربوط اور منظم مارکیٹ ہے جو آسٹریلیا، اسپین، یونان، سوئیڈین اور میکسیکو سمیت 50 ممالک تک پھیلی ہوئی ہے۔ بچوں سے جنسی زیادتی اور تشدد کی فلم بندی کے لیے پروڈکشن ہاؤسز اور تقسیم کار کمپنیاں بھی موجود ہیں۔ پولیس نے کینیڈا میں azovfilms.com نامی ویب سائٹ کا بھی سراغ لگایا جو بچوں کیساتھ پرتشدد جنسی زیادتی کی ویڈیوز نشر کیا کرتا تھا۔ ویب سائٹ کے 42 سالہ مالک برائن وے بھی حراست میں لیے گئے افراد میں شامل تھے۔

News Code 1895246

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 1 + 1 =