اسلامی مزاحمت کے رہنماؤں کو نشانہ بنانا امریکہ ،اسرائیل اور سعودی عرب کا مشترکہ ہدف

حزب اللہ لبنان کے سربراہ سید حسن نصر اللہ نے ایک عرب ٹی وی چینل کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے کہا ہے کہ اسلامی مزاحمت اور مقاومت کے رہنماؤں کو نشانہ بنانا امریکہ ،اسرائیل اور سعودی عرب کا مشترکہ ہدف ہے۔

مہر خبررساں ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق حزب اللہ لبنان کے سربراہ سید حسن نصر اللہ نے ایک عرب ٹی وی چینل المیادین کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے کہا ہے کہ اسلامی مزاحمت اور مقاومت کے رہنماؤں کو نشانہ بنانا امریکہ ،اسرائیل اور سعودی عرب کا مشترکہ ہدف ہے۔ حجۃ الاسلام والمسلمین سید حسن نصر اللہ نے نئے عیسوی سال کی مناسبت سے ملکی اور غیر ملکی عیسائیوں کو مبارکباد پیش کی۔

سید حسن نصر اللہ نے سپاہ اسلام کے مایہ ناز کمانڈر شہید میجر جنرل سلیمانی اورعراق کی رضاکار فورس کے سابق ڈپٹی کمانڈر شہید ابو مہدی مہندس کی شہادت کی پہلی برسی کی آمد کے موقع پر تعزيت اور تسلیت پیش کرتے ہوئے کہا کہ شہید سلیمانی کی خدمات تاریخ میں جلی حروف کے ساتھ باقی رہیں گي۔

سید حسن نصر اللہ نے امریکی صدر ٹرمپ کے آخری ایام کے بارے میں مختلف تجزیات کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ ٹرمپ اپنی حکومت کے آخری ایام میں کیا کریں گے سبھی اس کو دیکھنے کے منتظر ہیں۔ امریکہ اور اسرائيل کوئي جنگی قدم اٹھاتے ہیں یا نہیں اس کے بارے میں بعض نظریات موجود ہیں۔

انھوں نے کہا کہ ٹرمپ اپنے آپ کو بڑا سمجھنے کی بیماری میں مبتلا ہے اور اسے امریکہ کے صدارتی انتخابات میں شکست پر بھی شدید غصہ ہے ٹرمپ اپنی حکومت کے آخری ایام میں کوئی غیر سنجیدہ قدم اٹھائے گا اس کے بارے میں تجزیاتں موجود ہیں لیکن سب سے بڑا مسئلہ اقتدار منتقل کرنے کا مسئلہ ہے۔

حزب اللہ لبنان کے سربراہ نے کہا کہ جب آپ اسرائیلی ذرائع ابلاغ کے شور و غل کو سنتے ہیں تو آپ کو سمجھ لینا چاہیے کہ اس کے پیچھے کوئی  حقیقی بات موجود نہیں ہیں۔

سید حسن نصر اللہ نے کہا کہ اسلامی مقاومت اور مزاحمت کے رہنماؤں کو قتل کرنا امریکہ ، اسرائيل اور ان کے اتحادی عربوں کا مشترکہ ہدف ہے۔ ہمارے پاس ایسی اطلاعات ہیں کہ سعودی عرب یمن پر مسلط کردہ جنگ کے آغاز سے میرے قتل کے بارے میں تشویق اور ترغیب کررہا ہے۔ سعودی عرب کی رفتار عاقلانہ نہیں بلکہ معاندانہ ہے۔

سید حسن نصر اللہ نے کہا کہ شہید میجر جنرل سلیمانی اور شہید ابو مہدی مہندس کے بہیمانہ اور بزدلانہ قتل میں امریکہ، سعودی عرب اور اسرائیل شریک ہیں۔ شہید عماد مغنیہ اور شہید فخری زادہ کے قتل کی نسبت شہید سلیمانی کے قتل کو آشکارا انجام دیا گیا۔ شہید سلیمانی ایک ممتاز اور سحر انگیز شخصیت کے حامل تھے ان کے تمام اقدامات حکمت عملی پر مبنی ہوتے تھے۔

سید حسن نصر اللہ نے کہا کہ  شہید سلیمانی فوجی طور پر ایک اسٹریٹجک کمانڈر تھے اور ساتھ ہی ایک تاکتیکی رہنما بھی تھے۔ میں حاج قاسم کی شہادت سے پہلے میں بہت پریشان تھا اور اس کے بارے میں انہیں متعدد بار متنبہ کیا۔ میں حاج قاسم کو بہت یاد کرتا ہوں ، ہم نے کئی بار مل کر کام کیا اور چیلنجوں کا مقابلہ کیا۔ مجھے لگا کہ حاج قاسم اور میں ایک تھے۔

شہید ابو مہدی مہندس بھی ایک عظیم اور ممتاز انسان تھے انھوں نے عراق میں اہم ذمہ داریوں کو پورا کیا اور اللہ تعالی نے شہید سلیمانی اور شہید ابو مہدی مہندس کو ان کی عظيم اور گرانقدر خدمات کے بدلے میں درجہ شہادت عطا کیا ۔

News Code 1904561

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 1 + 1 =