بھارت کی ریاست اترپردیش میں پولیس کا پرامن مظاہرین پر بہیمانہ تشدد/ شہداء کی تعداد 20 ہوگئی

بھارت بھر میں شہریت کے متنازع اور ظالمانہ قانون کے خلاف پرامن احتجاجی مظاہروں کا سلسلہ جاری ہے بھارت کی ریاست اترپردیش کے بلند شہر سمیت مختلف شہروں میں بھارتی پولیس نے پرامن مظاہرین پر لاٹھی چارج اور بہیمانہ تشدد کیا ہے۔

مہر خبررساں ایجنسی نے سوشل میڈیا کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ بھارت بھر میں شہریت کے متنازع اور ظالمانہ قانون کے خلاف پرامن احتجاجی مظاہروں کا سلسلہ جاری ہے بھارت کی ریاست اترپردیش کے بلند شہر سمیت مختلف شہروں میں بھارتی پولیس نے پرامن مظاہرین پر لاٹھی چارج اور بہیمانہ تشدد کیا ہے۔ اترپردیش کے مختلف شہروں میرٹھ ، مظفر نگر، بلند شہر ، لکھنؤ اور دیگر شہروں میں پولیس نے مظاہرین پر لاٹھیوں سے وحشیانہ تشدد کیا، مظاہرین نے پیچھے ہٹنے سے انکار کر دیا جس کے بعد صورتحال مزید کشیدہ ہو گئی۔ بیشتر حساس اضلاع میں انٹرنیٹ سروس معطل ہے۔ ادھر ریاست بہار میں ہڑتال اور شہر شہر احتجاج جاری ہے، پٹنہ میں مظاہرین نے رکاوٹیں توڑ دیں، بھارت بھر میں پولیس کی فائرنگ سے ہلاک ہونےوالے افراد کی تعداد20ہوگئی ہے۔

کانگریس رہنما سونیا گاندھی کا کہنا ہے کہ بی جے پی حکومت اختلاف رائے کو کچلنے کیلئے طاقت کا وحشیانہ استعمال کررہی ہے، عوام حکومت کی غلط پالیسیوں پر اپنے تحفظات رجسٹر کرانےکا حق رکھتےہیں۔پورے بھارت میں عوام مودی سرکار کے خلاف سڑکوں پر آگئے ہیں۔ مظاہرین مودی سرکار کے شہریت سے متعلق ظالمانہ قانون کو واپس لینے کا مطالبہ کررہے ہیں۔ باخـبر ذرائع کے مطابق آر ایس ایس کے اہلکار اور مودی سرکار کے حامی لوگ  عوامی اور سرکاری املاک کو آگ لگا کر اس کا الزام مسلمانوں پر لگانے کی مذموم کوشش کررہے ہیں۔ عوام نے اس قسم کے متعدد افراد کو گرفتار کرکے پولیس کے حوالے کردیا ہے۔

News Code 1896375

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 6 + 0 =