بھارتی حکومت نے بھارتی ہندوؤں کو کشمیر میں بسانے کا آغاز کردیا

آزاد کشمیر کے سیکرٹری لبریشن سیل منصور ڈار نے کہا ہے کہ بھارتی حکومت نے بھارتی ہندوؤں کو کشمیر میں بسانے کا آغاز کردیا ہے پہلے مرحلے ميں 500 ہندوؤں کو اقامت دی گئی ہے۔

مہر خبررساں ایجنسی نے ایکس پریس کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ پاکستان کے زير انتظام آزاد کشمیر کے سیکرٹری لبریشن سیل منصور ڈار نے کہا ہے کہ  بھارتی حکومت نے بھارتی ہندوؤں کو کشمیر میں بسانے کا آغاز کردیا ہے پہلے مرحلے ميں 500 ہندوؤں کو اقامت دی گئی ہے۔ قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی برائے امور کشمیر و گلگت بلتستان نے کشمیر کی تازہ صورتحال اور لائن آف کنٹرول پربھارتی فائرنگ سے جانی و مالی نقصانات پر بریفنگ کیلیے وزیرخارجہ و سیکریٹری دفاع کوآئندہ اجلاس میں طلب کرلیا۔

چیئرمین رانا شمیم کی زیر صدارت اجلاس میں بھارتی مظالم کے خلاف مذمتی قرارداد منظورکی گئی،جس میں اقوام متحدہ اور او آئی سی سے کردار ادا کرنے کا مطالبہ کیا گیا۔اجلاس میں کشمیر میں آبادی کا تناسب تبدیل کرنے اور کشمیریوں  کی نسل کشی ،دوستی بس سروس کی صورتحال اوربھارتی فائرنگ سے جانی ومالی نقصانات پر غور کیا گیا اور متعلقہ حکام نے بریفنگ دی۔آزاد کشمیر کے سیکرٹری لبریشن سیل منصور ڈار نے بتایا کہ ہندوؤں کووادی میں رہائش دی جا رہی ہے،5سوہندوؤں کو ڈومیسائل دے دیئے گئے مزید5ہزار دیئے جانے کا منصوبہ ہے۔

News Code 1893567

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 7 + 5 =