ایران اور فرانس کے صدور کی ٹیلیفون پر گفتگو

اسلامی جمہوریہ ایران کے صدر حسن روحانی نے فرانس کے صدر میکرون سے ٹیلیفون پر باہمی گفتگو میں ایران کے میزائل پروگرام کے بارے میں مغربی ممالک کی تشویش کو رد کرتے ہوئے کہا ہے کہ دنیا کو مغربی ممالک کے ایٹمی ہتھیاروں اور پیشرفتہ میزائل نظام پر بھی تشویش ہے۔ مغربی ممالک کے ہتھیاروں کی نسبت ایران کے ہتھیار زیادہ خطرناک نہیں ہیں۔

مہر خبررساں ایجنسی نے ورلڈ نیوز کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ اسلامی جمہوریہ ایران کے صدر حسن روحانی اور فرانس کے صدر میکرون نے ٹیلیفون پر باہمی دلچسپی کے امور پر تبادلہ خیال کیا۔ فرانس کے صدارتی محل سے جاری ہونے والے بیان کے مطابق اس گفتگو میں دونوں رہنماؤں نے شام میں جاری کشیدگی اور بحران کو روکنے کے بارے میں بات چیت کی۔ فرانس کے صدر نے شام میں دہشت گردوں کے بھیانک جرائم کو نظر انداز کرتے ہوئے ایران پر زوردیا ہے کہ وہ صدر بشار اسد کو دہشت گردوں کے خلاف آپریشن بند کرنے کے سلسلے میں آمادہ کرے۔ فرانس کے صدر نے اس گفتگو میں ایران کے میزائل پروگرام کے بارے میں بھی تشویش کا اظہار کیا۔ صدر حسن روحانی نے بھی مشترکہ ایٹمی معاہدے کے سلسلے میں امریکہ اور مغربی ممالک کی عہد شکنی کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ یورپی ممالک کو امریکہ کی عہد شکنی کے خلاف آواز بلند کرنی چاہیے۔ صدر روحانی نے کہا کہ یورپی ممالک کو یمن میں رونما ہونے والے جنگی جرائم اور انسانی المیہ  پر اپنی آنکھیں بند نہیں کرنی چاہییں۔ صدر حسن روحانی نے ایران کے میزائل پروگرام کے بارے میں  مغربی ممالک کی تشویش کو رد کرتے ہوئے کہا ہے کہ دنیا کو مغربی ممالک کے ایٹمی ہتھیاروں اور پیشرفتہ میزائل نظام پر بھی تشویش ہے۔ مغربی ممالک کے ہتھیاروں کی نسبت  ایران کے ہتھیار زیادہ خطرناک نہیں ہیں۔اور ایران کے میزائل پروگرام کے بارے میں مغربی ممالک کی تشویش بےجا اور من گھڑت ہے۔

News Code 1879151

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 1 + 9 =