لندن ميں سات بم دھماكوں ميں 50افراد ہلاك اور 90 زخمي // برطانوي حكومت سخت بحران ميں مبتلا// جي ايٹ ممالك كا اجلاس ملتوي

مركزي لندن ميں جمعرات كي صبح زير زمين ٹرين سٹيشنوں اور تين مسافر بسوں ميں سات بم دھماكوں ميں كم سے كم 50 افرادہلاك اور 90زخمي ہوگئے ہيں

مہرخبررساں ايجنسي نے اخبار اينٹر نيشنل ہرالڈ ٹريبين كے حوالے سے نقل كيا ہے كہ لندن آج سات بم دھماكوں سے لرز اٹھا يہ دھماكے لندن كے زير زمين ٹرين سٹيشنوں اور تين بسوں ميں ہوئے ہيں زخمي ہونے والوں كي تعداد كے بارے ميں متضاد خبريں ہيں عيني شاہدوں كے مطابق ہلاك ہونے والوں كي تعداد كہيں زيادہ ہو سكتي ہےان دھماكوں كي اطلاع كے بعد لندن كےزير زمين ريلوے نظام كو بند كرديا گياہے

يہ دھماكے صبح دفتري اوقات شروع ہونے سے قبل ہوئے جس دوران ريلوے سٹيشنوں پر كافي رش ہوتا ہے دھماكوں كي اطلاع كے بعد زير زمين چلنے والي تقريباً تمام ٹرينوں كو روك ديا گياوزير اعظم ٹوني بليئر نے ان دھماكوں كو دہشت گردي كي واردات قرار ديا ہے

برطانوي حكام پر سكتہ طاري ہے ريلوے نظام كے بند ہوجانے كي وجہ سے لوگوں كو شديد مشكلات كا سامنا كرنا پڑا ہے بہت سي ٹرينيں زير زمين سرنگوں ميں رك گئيں اور ان ميں بيٹھے ہوئے لوگوں كو بھي شديد پريشاني اٹھاني پڑي ہے اطلاعات كے مطابق ان دھماكوں ميں القاعدہ كا ہاتھ بتايا جاتا ہے يہ دھماكےجي ايٹ ممالك كے اسكاٹ لينڈ ميں اجلاس كے موقع پر ہوئے ہيں جس كي ميزباني برطانيہ كررہا ہے اور يہ دھماكے المپيك كھيلوں كي   2012 ميں برطانيہ كے ميزبان بننے كےبعد ہوئے ہيں  لندن اس وقت سنگين بحران سے دوچار ہے اور بہت سے ٹي وي اسٹيشوں نے اپني معمولي نشريات كو قطع كركے اپني توجہ برطانيہ كے حالات پر مركوز كرلي ہے

 

News Code 204241

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 2 + 15 =