امریکہ اور پاکستان کا بچوں کے اغوا کی روک تھام کے معاہدے پر دستخط

امریکی اسٹیٹ ڈپارٹمنٹ نے اعلان کیا ہے کہ امریکہ اور پاکستان نے بین الاقوامی سطح پر بچوں کے اغوا کی روک تھام کے لیے ایک قانونی فریم ورک پر دستخط کردیئے ہیں۔

مہر خبررساں ایجنسی نے ڈان کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ امریکی اسٹیٹ ڈپارٹمنٹ نے اعلان کیا ہے کہ امریکہ اور پاکستان نے بین الاقوامی سطح پر بچوں کے اغوا کی روک تھام کے لیے ایک قانونی فریم ورک پر دستخط کردیئے ہیں۔

اطلاعات کے مطابق انٹرنیشنل پیرنٹل چائلڈ ابڈکشن (بین الاقوامی والدین کے بچوں کے اٖغوا) میں کسی بچے کو اس کے ملک سے باہر نکالنا یا حراست میں لینا والدین یا سرپرست کے حقوق کے خلاف ہے۔

اقوام متحدہ اور انسانی حقوق کی تنظیمیں اس کو بچوں کے ساتھ بدسلوکی اور والدین سے بیگانگی کی ایک انتہائی شکل سمجھتی ہیں۔

امریکی قومی مرکز برائے بچوں کی گمشدگی اور استحصال (این سی ایم ای سی) کے مطابق ہر سال تقریبا 8 لاکھ بچے اور ہر روز 2 ہزار سے زائد بچے لاپتہ ہوجاتے ہیں۔

این سی ایم ای سی کا کہنا تھا کہ ہر سال 2 لاکھ 3 ہزار بچوں کو اغوا کیا جاتا ہے۔

واشنگٹن میں جاری ایک سرکاری بیان میں کہا گیا کہ یکم جولائی کو امریکہ نے پاکستان کے بچوں کے اغوا کے شہری پہلوؤں سے متعلق بین الاقوامی 1980 کے ہیگ کنونشن میں شمولیت کو قبول کرلیا۔

یہ کنونشن ایک کثیر الجہتی معاہدہ ہے جو غلط طریقے سے نکالے گئے یا اپنے ملک سے دور رکھے گئے بچوں کو فوری طور پر وطن واپسی کے لیے کارروائی کرتا ہے۔

فی الحال ہیگ کنونشن میں معاہدہ کرنے والی 98 ریاستیں ہیں۔

یہ کنونشن یکم اکتوبر سے امریکہ اور پاکستان کے درمیان نافذ ہوگا، جس کے ساتھ ہی دونوں ممالک کے درمیان والدین کے اغوا کے معاملات کو حل کرنے کے لیے بین الاقوامی سطح پر تسلیم شدہ قانونی فریم ورک نافذ ہوگا۔

News Code 1901645

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 1 + 2 =