پلوامہ حملے کا ایک اور ماسٹر مائنڈ ہلاک

بھارتی فورسز نے کشمیر کے علاقے ترال میں کارروائی کے دوران جیش محمد کے مدثر احمد خان کو 3 ساتھیوں سمیت ہلاک کردیا ہے۔

مہر خبررساں ایجنسی نے بھارتی ذرائع کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ بھارتی فورسز نے کشمیر کے علاقے ترال میں کارروائی کے دوران جیش محمد کے مدثر احمد خان کو 3 ساتھیوں سمیت ہلاک کردیا ہے۔

بھارتی میڈیا کا کہنا ہے کہ لاشیں جلی ہوئی ہیں، اس لئے ڈی این اے ٹیسٹ کیا جارہا ہے، بھارتی فورسز نے ہلاک شخص کو پلوامہ حملے کا ماسٹر مائنڈقرار دے دیا۔ بھارتی فوج نے پلوامہ حملے کے ماسٹر مائنڈ کے بارے میں بتایا کہ مدثر احمد خان المعروف محمد بھائی 23 سالہ نوجوان ہے جو پیشے کے لحاظ سے الیکٹریشن ہے اور حریت پسند جماعتوں کے لیے زیر زمین رہتے ہوئے نور محمد تانترے کے لیے کام کرتا تھا۔ بھارتی فوج کا کہنا ہے کہ 2017 میں مسلح جدوجہد کا حصہ بننے والے مدثر احمد خان نے اپنے استاد نور محمد تانترے کی مقابلے میں ہلاکت کے بعد پلوامہ حملے کا منصوبہ بنایا جس کے لیے ماروتی کار کا انتظام کیا اور اس میں بارودی مواد بھی نصب کیا۔ مدثر اور پلوامہ حملے کے خودکش  بمبار عادل ڈار کے درمیان مستقل رابطہ رہتا تھا۔ اس سے پہلے 18 فروری کو بھی بھارتی فورسز نے کشمیر میں ہی 12 گھنٹے کی کارروائی کے بعد ہی پلوامہ حملے کا ماسٹر مائنڈ عبدالرشید غازی کو قراردے کر مارنے کا دعویٰ کیاتھا۔

News Code 1888768

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 1 + 1 =