جامعہ ملیہ کے طلبہ و طالبات نے جامعہ ملیہ پر پولیس کے حملے کو جلیانوالا باغ سے ملادیا

نئی دہلی کی جامعہ ملیہ کے طلبہ و طالبات نے دو ہفتے پہلے جامعہ میں پولیس کے غنڈہ راج، طالب علموں پر تشدد اور توڑ پھوڑ کو سانحہ جلیانوالا باغ سے ملاتے ہوئے اسے جامعہ والا باغ کا نام دے دیا ہے۔

مہر خبررساں ایجنسی نے بھارتی ذرائع کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ نئی دہلی کی جامعہ ملیہ کے طلبہ و طالبات نے دو ہفتے پہلے جامعہ میں پولیس کے غنڈہ راج، طالب علموں پر تشدد اور توڑ پھوڑ کو سانحہ جلیانوالا باغ سے ملاتے ہوئے اسے جامعہ والا باغ کا نام دے دیا ہے۔ اطلاعات کے مطابق نئی دہلی جامعہ ملیہ کے طالب علموں نے دو ہفتے پہلے جامعہ میں پولیس تشدد اور توڑ پھوڑ فائرنگ اور آنسو گیس کی شیلنگ کو برطانوی راج میں سانحہ جلیانوالہ باغ سے منسوب کیا اور اسے جامعہ والا باغ کا نام دیا، جامعہ میں تھیٹر کا انعقادکیا گیا، اور پولیس کے ظلم و ستم کو تمثیلی انداز میں بیان کیا گیا۔

آج کے احتجاج میں پولیس تشدد سے ایک آنکھ کی بینائی سے محروم ہونے والے طالب علم منہاج الدین کے ساتھ ایسا اظہار یکجہتی کیا کہ سب کے سب اپنی آنکھ پر پٹی باندھ کر بیٹھ گئے، نعروں کی گونج میں شہریت کے قانون کے خاتمے تک احتجاج جاری رکھنے کا عزم ظاہر کیا گيا۔

News Code 1896605

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 5 + 9 =