ترک صدر کی شامی کردوں پر دوبارہ حملہ کرنے کی دھمکی

ترک صدر رجب طیب اردوغان نے شامی کردوں کو دھمکی دیتے ہوئے کہا ہے کہ اگر کردوں نے ترکی سے ملحقہ سرحد کو خالی نہ کیا تو ان کے خلاف دوبارہ فوجی آپریشن شروع کردیا جائےگا۔

مہر خبررساں ایجنسی نے آناتولی کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ ترک صدر رجب طیب اردوغان نے شامی کردوں کو دھمکی دیتے ہوئے کہا  ہے کہ اگر کردوں نے ترکی سے ملحقہ سرحد کو خالی نہ کیا تو ان کے خلاف دوبارہ فوجی آپریشن شروع کردیا جائےگا۔

اطلاعات کے مطابق استنبول میں منعقدہ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے صدر طیب اردوغان نے وضاحت کی کہ ترکی نے کرد ملیشیا سے نہیں بلکہ امریکہ سے معاہدہ کیا ہے۔ اس حوالے سے مخالفین بے سروپا الزامات سے گریز کریں۔ ترک صدر نے مزید کہا کہ ہم نے 9 دن میں شام کا 1500 مربع کلو میٹر علاقے کو کرد ملیشیا سے پاک کیا جس کے دوران 765 کرد مارے گئے ہیں۔ترک صدر نے فوجی آپریشن میں اپنی کامیابیوں سے آگاہ کرتے ہوئے بتایا کہ ہم نے شام کے علاقہ راس العین اور تل ابیض سمیت کُل 111 رہائشی علاقوں کا کنٹرول حاصل کر لیا ہے۔ جہاں امدادی تنظیموں کو بھی متحرک کر دیا گیا ہے تاکہ ریسکیو کا کام جلد از جلد مکمل کرلیا جائے۔

واضح رہے کہ 11 اکتوبر کو ترکی نے شمالی شام میں کردوں کے علاقے میں فوجی حملے کا آغاز کیا تھا جسے امریکہ کی درخواست پر 5 دنوں تک معطل کیا گیا لیکن ان  5 دنوں میں بھی ترکی کی فوجی کارروائی جاری رہی ہے۔

News Code 1894793

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 1 + 8 =