امریکہ اور طالبان میں مذاکرات کے نئے دور کا آغاز

امریکہ اور طالبان کے درمیان افغان امن مذاکرات کا نیا دور آج سے دوحہ میں شروع ہو رہا ہے۔

مہر خبررساں ایجنسی نے رائٹرز کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ امریکہ اور طالبان کے درمیان افغان امن مذاکرات کا نیا دور آج سے دوحہ میں شروع ہو رہا ہے۔ امریکی خصوصی نمائندے زلمے خلیل زاد طالبان نمائندوں سے مذاکرات کریں گے، امریکا اور طالبان کے درمیان مذاکرات کا یہ چھٹا دور ہے۔ افغان طالبان کے ترجمان ذبیح اللہ مجاہد نے کہا ہے کہ مذاکرات کا محور افغانستان سے امریکی فوجیوں کے انخلاء اور اس کے عوض طالبان کی جانب سے امریکا کو امن کی ضمانت ہوگا۔ زلمے خلیل زاد پہلے کہہ چکے ہیں کہ ایسا ڈرافٹ تیار کرلیا گیا ہے جس میں طالبان افغان سرزمین کو دوسرے ممالک بالخصوص امریکہ میں دہشت گردی کے لیے استعمال نہ ہونے اور افغان سرزمین کو دہشت گردوں کی پناہ گاہ نہ بننے کی ضمانت دیں گے۔ ادھر زلمے خلیل زاد کے ساتھ کام کرنے والی ٹیم کے ایک اہلکار نے بتایا کہ آج سے شروع ہونے والے مذاکرات میں طالبان نمائندوں کو کابل حکومت سے براہ راست مذاکرات کرنے کے لیے آمادہ کیا جائے گا۔ قبل ازیں افغان طالبان کابل حکومت کو کٹھ پتلی حکومت قرار دیتے ہوئے مذاکرات سے گریز کرتے رہے ہیں۔

News Code 1890164

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 4 + 3 =