پاکستان میں غیر مسلموں کے طلاق سرٹیفکیٹ سے متعلق عدالت کا اہم فیصلہ

لاہور ہائیکورٹ نے غیر مسلم خاتون کو طلاق کے بعد والد کے نام سے شناختی کارڈ کے اجرا کی درخواست پر فیصلہ سنا دیا۔

مہر خبررساں ایجنسی نے پاکستانی میڈیا سے نقل کیاہےکہ عدالت نے پنجاب حکومت کو غیر مسلموں کےطلاق سرٹیفکیٹ سے متعلق رولز بنانے کی ہدایت کردی۔

جسٹس طارق سلیم نے شمائلہ شریف کی درخواست پر فیصلہ جاری کیا۔جسٹس طارق سلیم نے ریمارکس دیے کہ پنجاب حکومت 90 دن میں ضروری رولز بنائے، پنجاب لوکل گورنمنٹ ایکٹ کے تحت رولز کا اجرا ضروری ہے۔عدالت نے کہا کہ مسیحی برادری کی یونین کونسلز کا سرٹیفکیٹ جاری نہ ہونے کی شکایات آ رہی ہیں۔درخواست گزار کا مؤقف تھا کہ یونین کونسل غیر مسلموں کو طلاق سرٹیفکیٹ جاری نہیں کرتی، طلاق سرٹیفکیٹ کے بغیر نادرا شناختی کارڈ میں تبدیلی نہیں کر رہا۔

عدالت نے کہا کہ نادرا رجسٹریشن پالیسی کے تحت طلاق یافتہ اپنی ازدواجی حیثیت بیان حلفی پر تبدیل کروا سکتی ہیں، رولز بنانے تک نادرا رجسٹریشن پالیسی کے تحت سہولت فراہم کرے۔ عدالت نے درخواست گزار کو شناختی کارڈ کیلئے دوبارہ نادرا سے رجوع کرنے کی ہدایت کر دی۔

News Code 1914257

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • captcha