ملائیشیا کے وزير اعظم کا کشمیر کے معاملے پر بھارت کی دھمکیوں میں نہ آنے کا عزم

ملائشیا کے وزیراعظم مہاتیر محمد نے ہندو تاجروں کے ملائیشیا سے اربوں ڈالر مالیت کی ناریل کے تیل کی تجارت بند کرنے کی دھمکی کو خاطر میں نہ لاتے ہوئے کشمیر سے متعلق اپنا بیان واپس لینے سے انکار کردیا ہے۔

 مہر خبررساں ایجنسی نے غیر ملکی ذرائع کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ ملائشیا کے وزیراعظم مہاتیر محمد نے ہندو تاجروں کے ملائیشیا سے اربوں ڈالر مالیت کی ناریل کے تیل کی تجارت بند کرنے کی دھمکی کو خاطر میں نہ لاتے ہوئے کشمیر سے متعلق اپنا بیان واپس لینے سے انکار کردیا ہے۔ 

 اطلاعات کے مطابق ملائیشیا کے وزیراعظم مہاتیر محمد نے بھارت کو دوٹوک الفاظ میں کہا ہے کہ ہندو تاجروں کی  ملائیشیا سے ناریل کے تیل کی خریداری بند کرنے کی دھمکی کے باوجود وہ کشمیر میں بھارتی اقدامات اور کشمیریوں کے حق خود ارادی سے متعلق اپنا بیان واپس نہیں لیں گے۔

وزیراعظم مہاتیر محمد نے پارلیمنٹ کے باہر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے مزید کہا کہ اقوام متحدہ سے کشمیر پر اپنی قراردادوں پر عمل درآمد کرنے کا مطالبہ بہت سوچ سمجھ کر کیا تھا جس پر اب بھی قائم ہوں اور کوئی دباؤ مجھے اپنے موقف سے پیچھے نہیں ہٹا سکتا۔

واضح رہے کہ وزیراعظم مہاتیر محمد نے اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی میں اپنے خطاب میں بھارتی فوج کی جارحیت اور مودی سرکار کی کشمیر کی خصوصی حیثیت ختم کرنے پر شدید تنقید کرتے ہوئے مطالبہ کیا تھا کہ اقوام متحدہ کو اپنی رٹ قائم کرتے ہوئے مسئلہ کشمیر سے متعلق اپنی قراردادوں پر عمل درآمد کرانا چاہیے۔

News Code 1894789

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 7 + 5 =