ہم ابھی ٹیکنالوجی کی حدود میں آگے بڑھانے میں کامیاب نہیں ہوسکے ہیں

رہبر معظم انقلاب اسلامی حضرت آیت اللہ العظمی خامنہ ای نے ملک کے بعض ممتاز جوانوں اور والیبال ٹیم کے نو جوان کھلاڑیوں سے خطاب کرتے ہوئے فرمایا: ابھی ہم ٹیکنالوجی کی حدود میں آگے بڑھنے میں کامیاب نہیں ہوسکے ہیں۔

مہر خبررساں ایجنسی کے نامہ نگار کی رپورٹ کے مطابق رہبر معظم انقلاب اسلامی حضرت آیت اللہ العظمی خامنہ ای نے ملک کے بعض عالمی المپیاڈ مقابلوں میں شرکت کرنے اور میڈل حاصل کرنےوالے ممتاز جوانوں اور والیبال ٹیم کے نو جوان کھلاڑیوں سے خطاب کرتے ہوئے فرمایا: ابھی ہم ٹیکنالوجی کی حدود میں آگے بڑھنے میں کامیاب نہیں ہوسکے ہیں۔

رہبر معظم انقلاب اسلامی نے جوانوں کو ملک کے مستقبل کی امید اور ان کے ساتھ ملاقات کو شریں قراردیتے ہوئے فرمایا: ملک کے ممتاز اور باصلاحیت جوانوں کے بیانات اور افکار سے ظاہر ہوتا ہے ان کی ملک کے مسائل پر گہری اور دقیق نظر ہے جو خوشی کا باعث ہے ۔

رہبر معظم انقلاب اسلامی نے جوانوں کی طرف سے میڈل ھدیہ کرنے کے اقدام پر شکریہ ادا کرتے ہوئے فرمایا: میں آپ کے ان  ہدایا کو قبول کرنے کے بعد آپ کو ہی واپس کرتا ہوں تاکہ یہ آپ کے پاس باقی رہیں۔

رہبر معظم انقلاب اسلامی نے فرمایا: ہمیں آپ کے افتخار پر فخر ہے آپ کی سربلندی و سرافرازی ہماری سربلندی اورسرافرازی ہے۔

رہبر معظم انقلاب اسلامی نے قاجار اور پہلوی دور میں ایرانی  قوم پر مسلط کردہ علمی اور صنعتی پسماندگی کی طرف اشارہ کرتے ہوئے فرمایا: انقلاب اسلامی کی کامیابی کے بعد بہت سے شعبوں میں اچھی خاصی پیشرفت حاصل ہوئی ہے اور ایران بعض علمی شعبوں ميں دنیا کے سر فہرست ممالک کی صف میں شامل ہوگیا ہے لیکن ابھی علمی اور صنعتی پیشرفت طویل راستہ باقی ہے ابھی ہماری رفتار سائنس و ٹیکنالوجی کے شعبہ میں کافی کند ہے ہمیں ٹیکنالوجی کی حدود میں آگے بڑھنے کی تلاش و کوشش بھر پور انداز میں جاری رکھنی چاہیے۔

رہبر معظم انقلاب اسلامی نے ملک کو درپیش مشکلات کی طرف اشارہ کرتے ہوئے فرمایا: مشکلات کی وجہ سے جوانوں کو متوقف نہیں ہونا چاہیے بلکہ انھیں مشکلات کو دور کرنےکے سلسلے میں اپنی جد وجہد کو جاری رکھنا چاہیے۔

رہبر معظم انقلاب اسلامی نے فرمایا:  طلباء کو اسلامی، انقلابی افکار اور بصیرت کے فروغ کے سلسلے میں اپنی ذمہ داریوں پر عمل کرنا چاہیے اور ملک کو سائنس و ٹیکنالوجی کے شعبہ میں آگے کی سمت بڑھانے کی کوشش کرنی چاہیے۔

News Code 1892766

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 1 + 1 =