امریکہ اور طالبان کے درمیان معاہدہ ہونے کے باوجود افغانستان میں خطرہ برقرار رہےگا

افغانستان کے امور میں امریکی اسپیشل انسپکٹر جنرل " سگار" جان اسپوکو نے خبردار کیا ہے کہ امریکہ اور طالبان کے درمیان مفاہمتی سمجھوتہ ہونے کے باوجود افغانستان میں دہشت گرد تنظیموں کا خطرہ برقرار رہے گا۔

مہر خبررساں ایجنسی نے غیر ملکی ذرائع کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ افغانستان کے امور میں امریکی اسپیشل انسپکٹر جنرل " سگار" جان اسپوکو نے خبردار کیا ہے کہ امریکہ اور طالبان کے درمیان مفاہمتی سمجھوتہ ہونے کے باوجود افغانستان میں دہشت گرد تنظیموں کا خطرہ برقرار رہے گا۔

اطلاعات  کے مطابق سگار کو امریکی کانگریس کی جانب سے 18 سال سے جاری جنگ کی نگرانی اور جنگ زدہ افغانستان میں امن و استحکام کی بحالی کے حوالے سے سہہ ماہی رپورٹس جمع کروانے کا مینڈیٹ دیا گیا ہے۔

چنانچہ اپنی رپورٹ میں سگار نے بتایا کہ " امن سمجھوتے کے ساتھ اور اس کے بغیر بھی ممکنہ طور پر افغانستان میں مختلف  دہشت گرد تنظیموں میں جھگڑا رہے گا جو افغانستان اور عالمی برادری کے لیے خطرہ ہے۔"

رپورٹ میں مزید کہا گیا کہ افغان نیشنل ڈیفنس اینڈ سیکیورٹی فورسز (اے این ڈی ایس ایف) کے پاس حملوں سے نمٹنے کی صلاحیت محدود ہے اور پائیداری، آلات، انفرا اسٹرکچر اور تربیت کی لاگت کے لیے وہ عطیات دہندگان کی جانب سے 4 سے 5 ارب ڈالر کی امداد پر انحصار کرتے ہیں۔

News Code 1891799

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 3 + 0 =