میانمار کی فوج نے عالمی عدالت کا روہنگیا کے متعلق جامع تحقیقات کا مطالبہ مسترد کردیا

میانمار کی فوج نے انٹرنیشنل کرمنل کورٹ کے استغاثہ کا روہنگیا مسلمانوں کے خلاف مبینہ جرائم کی جامع تحقیقات کرنے کا مطالبہ مسترد کردیا۔

مہر خبررساں ایجنسی نے غیر ملکی ذرائع کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ میانمار کی فوج نے انٹرنیشنل کرمنل کورٹ کے استغاثہ کا روہنگیا مسلمانوں کے خلاف مبینہ جرائم کی جامع تحقیقات کرنے کا مطالبہ مسترد کردیا۔ اقوام متحدہ کے مطابق میانمار میں نسل کشی کے دوران تقریباً 7 لاکھ 40 ہزار کے قریب روہنگیا افراد میانمار سے ہجرت کرکے بنگلہ دیش میں پناہ لینے پر مجبور ہوگئے تھے۔

روہنگیا مسلمانوں کے خلاف مبینہ جرائم  کے واقعہ پر آئی سی سی کی استغاثہ فاتو بینسودا نے ستمبر کے مہینے میں ابتدائی تحقیقات کا آغاز کیا تھا تاہم اب انہوں نے کہا ہے کہ وہ معاملے کو آگے بڑھاتے ہوئے پوری تحقیقات کی درخواست کریں گی۔

واضح رہے کہ میانمار نے انٹرنیشنل کرمنل کورٹ پر دستخط نہیں کیے ہیں تاہم عدالت نے ستمبر کے مہینے میں فیصلہ سنایا تھا کہ بنگلہ دیش جہاں پناہ گزین قیام پذیر ہیں، اس کا رکن ہے جس کی وجہ سے انہیں اس مبینہ واقعے کی تحقیقات کا اختیار ہے۔ انٹرنیشنل کمیشن آف جیورسٹس کے ایشیا پیسیفک خطے کے ڈائریکٹر فریڈرک راسکی کا کہنا ہے کہ آئی سی سی کی مداخلت بالکل جائز ہے۔

News Code 1891712

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 1 + 8 =