نیوزی لینڈ مساجد پر فائرنگ، جاں بحق افراد کی تعداد 49 ہو گئی

نیوزی لینڈ کی دو مساجد میں حملے میں جاں بحق ہونے والے افراد کی تعداد 49 ہو گئی جبکہ 20 سے زائد زخمی ہو گئے ہیں۔

مہر خبررساں ایجنسی نے رائٹرز کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ نیوزی لینڈ کی دو مساجد میں حملے میں جاں بحق ہونے والے افراد کی تعداد 49 ہو گئی جبکہ 20 سے زائد زخمی ہو گئے ہیں۔ حملے کے الزام میں 4 افراد کو حراست میں لیا گیا ہے جن میں سے ایک پر قتل کا الزام عائد کر دیا گیا ہے۔

واقعے کے بعد نیوزی لینڈ کی پولیس نے پریس کانفرنس کی جس میں بتایا کہ حملہ آوروں نے النورمسجد اور لِین وڈ میں نمازیوں کو نشانہ بنایا۔ انہوں نے بتایا کہ ڈینز ایونیو میں واقع مسجد میں 41 افراد، جبکہ لین وُڈ مسجد میں 7 افراد جاں بحق ہوئے، اسپتال میں زیر علاج ایک زخمی کے دم توڑنے سے جاں بحق افراد کی تعداد 49 ہوگئی۔ جاں بحق افراد میں خواتین اوربچے بھی شامل ہیں۔

پولیس نے کرائسٹ چرچ کے مرکزی علاقے کے رہائشیوں کو گھروں میں رہنے کی ہدایت کی ہے۔ پولیس نےسرچ آپریشن کے دوران متعدد گاڑیوں میں نصب بموں کو بھی ناکارہ بنایا ہے۔ پولیس حکام نے بتایا کہ خاتون سمیت 4 افراد کو حراست میں لیا گیا ہے جن میں سے ایک کو کل عدالت میں پیش کیا جائے گا۔ مقامی میڈیا کے مطابق حملہ آور اسلام مخالف اور امیگرنٹس کے خلاف تعصب پر مبنی پیغام چھوڑ کر فرار ہوئے تھے۔

مقامی میڈیاکا کہنا ہے کہ مسجد میں ایک مسلح شخص داخل ہوا جس نے مشین گن سے فائرنگ کی، حملہ آور نے پنڈلیوں میں گولیوں سے بھرے میگزین باندھے ہوئے تھے۔ مقامی میڈیا کا کہنا ہے کہ حملہ آور جدید ہتھیاروں سے لیس اور پیٹرول بموں سے بھری گاڑی کیساتھ پہنچا تھا،جو ہیلمٹ میں لگے کیمرے سے واردات کی ویڈیو لائیو اسٹریمنگ کرتارہا۔ مقامی میڈیا نے مزید بتایا ہےکہ مسلح شخص نے مسجد میں داخل ہوتے ہی اندھا دھند فائرنگ کی، اس نے کئی بار گن کو ری لوڈ کیا اور مختلف کمروں میں جا کر فائرنگ کی۔

مقامی میڈیانے یہ بھی کہا کہ 3 منٹ تک مسجد میں فائرنگ کرنے کے بعد حملہ آور مرکزی دروازے سے باہر نکلا،جہاں اس نے گاڑیوں پر بھی فائرنگ شروع کر دی۔

حملے میں بنگلادیش کی ٹیم بال بال بچ گئی، جس کے کھلاڑی فائرنگ کے وقت نماز جمعہ کی ادائیگی کے لیے دہشت گردوں کا نشانہ بننے والی ایک مسجد میں موجود تھے، کھلاڑیوں نے بھاگ کر جان بچائی۔

نیوزی لینڈ کی وزیراعظم جیسنڈا ایرڈرن نے کرائسٹ چرچ کی مساجد میں فائرنگ کے واقعے کی مذمت کرتے ہوئے واقعے کو نیوزی لینڈی کی تاریخ کا سیاہ ترین دن قرار دیا ہے۔ ایک پریس کانفرنس میں ان کا کہناتھا کہ ایسے دلخراش واقعےکی تاریخ میں مثال نہیں ملتی، مرنےوالوں میں بہت سے پناہ گزین اورتاریکن وطن ہیں۔

News Code 1888868

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 8 + 10 =