ملائشیا کے بادشاہ نے روسی حسینہ کے عشق میں بادشاہت چھوڑدی

ملائیشیا کےبادشاہ سلطان محمد روسی حسینہ کے عشق میں بادشاہی تخت سے دستبردار ہوگئے ہیں۔

مہر خبررساں ایجنسی نے فرانسیسی خبررساں ایجنسی کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ ملائیشیا کےبادشاہ سلطان محمد روسی حسینہ کے عشق میں بادشاہی تخت سے دستبردار ہوگئے ہیں۔ اے ایف پی کی رپورٹ کے مطابق سلطان محمد پنجم کا اقدام نومبر کے آغاز میں 2 ماہ کی طبی رخصت کے بعد سامنے آیا، اس دوران ماسکو کی سابقہ حسینہ سے ان کی شادی کی غیر مصدقہ خبریں بھی گردش میں تھیں۔ قومی محل کی جانب سے جاری کیے گئے بیان میں ان کے استعفیٰ کی تصدیق کی گئی ہے۔ سلطان محمد پنجم دسمبر 2016 میں تخت نشین ہوئے تھے اور نومبر 2018 میں انہوں نے علاج کی غرض سے عارضی رخصت لی تھی۔بعد ازاں آن لائن ان سے متعلق روس میں سابقہ مس ماسکو سے شادی کی رپورٹس بھی گردش میں تھیں تاہم ملائیشیا میں شاہی حکام کی جانب سے بادشاہ کی شادی کی افواہوں پر کوئی تبصرہ نہیں کیا گیا اور نا ہی ان کی صحت سے متعلق کوئی تفصیلات جاری کی گئیں۔ ملائیشیا میں آئینی طور پر شاہی نظام رائج ہےجس کے تحت ہر 5 سال بعد ملائیشیا کی 9 مختلف ریاستوں کے حکمرانوں میں سے ایک تخت نشین ہوتا ہے۔تخت نشینی کا یہ نظام 1957 میں برطانیہ سے آزادی حاصل کرنے کے بعد عمل میں آیا تھا اور سلطان محمد پنجم تخت سے دستبردار ہونے والے پہلے بادشاہ ہیں۔سرکاری میڈیا کے مطابق سلطان محمد پنجم نے آکسفورڈ کے سینٹ کراس کالج اور آکسفورڈ سینٹر فار اسلامک اسٹڈیز سے تعلیم حاصل کی تھی۔ملائشیا کے سلطانوں کی تاریخ 15ویں صدی کے ملائی سلطان سے جاملتی ہے اور بادشاہ کو یانگ دی پیرتن آگونگ یعنی عظیم حکمران کہا جاتا ہے۔

News Code 1887096

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 5 + 0 =