امریکہ میں شامی پناہ گزین طالبہ پر امریکی طالبہ کا تشدد

امریکہ میں شامی پناہ گزین 14 سالہ مسلم طالبہ کو مقامی اسکول کی ایک امریکی طالبہ نے تشدد کا نشانہ بنایا۔

مہر خبررساں ایجنسی نے غیر ملکی ذرائع کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ امریکہ میں شامی پناہ گزین 14 سالہ مسلم طالبہ کو مقامی اسکول کی ایک امریکی طالبہ نے تشدد کا نشانہ بنایا۔ اطلاعات کے مطابق امریکی ریاست پنسلوانیا کے چارٹیئرز ویلی ہائی اسکول کی مقامی طالبہ نے شام سے تعلق رکھنے والی پناہ گزین طالبہ کو اسکول کے ٹوائلٹ میں تشدد کا نشانہ بنایا۔شامی پناہ گزین امریکی طالبہ کے تشدد سے شدید زخمی ہوگئی جسے اسپتال منتقل کردیا گیا، طالبہ پر تشدد کی ویڈیو وائرل ہونے کے بعد امریکی پولیس مقامی طالبہ کے خلاف تفتیش کے لیے مجبور ہوگئی۔ ادھر کولیئر ٹاؤن شپ پولیس نے شامی طالبہ پر تشدد کو مسلمانوں کے خلاف نفرت کے بجائے دو طالبات میں جھگڑا قرار دیکر مقدمے کو ختم کرنے کی کوشش کی اور صرف نظم وضبط کی خلاف ورزی کے تحت کارروائی کی درخواست کی۔ مقامی تنظیم امریکہ اسلامی تعاون کونسل نے 14 سالہ مسلمان طالبہ کو تمام تر قانونی مدد کی پیشکش کرتے ہوئے اصرار کیا کہ تشدد کا واقعہ مسلمان اور حجاب سے نفرت کا نتیجہ ہے جس کا جان بوجھ کر رخ موڑا جا رہا ہے۔ واضح رہے کہ مسلمان طالبہ شام میں خانہ جنگی کے بعد دو سال اہل خانہ کے ہمراہ پناہ گزین کیمپ میں گزارنے کے بعد امریکہ پہنچی تھی اور پنسلوانیا کے مقامی اسکول میں زیر تعلیم ہے۔

News Code 1886677

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 8 + 2 =