بھارت میں کسانوں کے احتجاج کے دوران ایک سکھ مذہبی پیشوا نے خودکشی کر لی

بھارت میں مودی سرکار کے خلاف کسانوں کا احتجاج جاری ہے، کسانوں کے احتجاج کے دوران ایک سکھ مذہبی پیشوا نے خودکشی کرلی ۔

مہر خبررساں ایجنسی نے بھارتی ذرائع کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ بھارت میں مودی سرکار کے خلاف کسانوں کا احتجاج جاری ہے، کسانوں کے احتجاج کے دوران ایک سکھ مذہبی پیشوا نے خودکشی کرلی ۔ 

اطلاعات کے مطابق ریاست ہریانہ کے علاقے کارنال سے تعلق رکھنے والے سکھ مذہبی رہنما سنت بابا رام سنگھ نے نئی دہلی کی سرحد پر خود کو گولی مار کر زندگی کا خاتمہ کرلیا۔ 

میڈیا رپورٹس کے مطابق  ان کی جانب سے اپنی موت سے قبل پنجابی زبان میں ایک خط بھی لکھا گیا جس میں انھوں نے کہا کہ وہ احتجاج کرنے والے کسانوں سے اظہارِ یکجہتی کے لیے خود کشی کر رہے ہیں۔ 

بابا رام سنگھ بھی ایک کسان تھے اور ہریانہ کے علاقے کارنال کی شرونامی گردوارا پربندھک کمیٹی (ایس جی پی سی)  کے لیڈر تھے، اور بڑی تعداد میں لوگ ان کی پیروی کرتے تھے۔ 

خودکشی سے قبل لکھے گئے اپنے خط میں ان کا کہنا تھا انھیں کسانوں کی حالت زار اور پھر حکومتی ظلم و ستم دیکھ کر بہت دکھ ہوا۔ 

اپنے خط میں اس نے لکھا تھا کہ میرا یہ قدم حکومت کے مظالم کے خلاف اور کسانوں کے حق میں ایک آواز ہے۔ 

News Code 1904404

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 1 + 10 =