یہودیوں کے سابق روحانی پیشوا کورونا وائرس سے ہلاک

اسرائیل کے سابق ربی اعظم اور یہودیوں کے سابق روحانی پیشوا 79 سالہ علیاہو بخشی دورون کورونا وائرس سے ہلاک ہوگئے ہیں۔

مہر خبررساں ایجنسی نے غیر ملکی ذرائع کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ اسرائیل کے سابق ربی اعظم اورسفاردی یہودیوں کے سابق روحانی پیشوا 79 سالہ علیاہو بخشی دورون کورونا وائرس سے ہلاک ہوگئے ہیں۔ سفاردی یہودی دراصل پورچوگیزی و ہسپانوی نسل سے تعلق رکھنے والے یہودیوں کو کہا جاتا ہے اور یہودیت کے نام پر فلسطین پر قبضہ کرکے بنائے گئے ملک اسرائیل میں بھی اس نسل کے  کافی  یہودی آباد ہیں۔

اسرائیلی حکومت کی جانب سے ربی اعظم یعنی روحانی پیشوا کے دو عہدے ہیں، جن میں سے ایک پر سفاردی یہودیت کے پیروکاروں کے روحانی پیشوا کو تعینات کیا جاتا ہے جب کہ دوسرے عہدے پر اشکنازی یہودیت کے پیروکاروں کے روحانی پیشوا کو تعینات کیا جاتا ہے۔ اشکنازی یہودی درصل جرمن نصل کے یہودیوں کو کہا جاتا ہے اور اس نسل کے یہودی بھی اسرائیل میں آباد ہیں اور اسرائیل کی جانب سے سرکاری سطح پر تعینات کیے جانے والے دونوں روحانی پیشوا دنیا کے دیگر ممالک میں بسنے والے اسی فرقے کے یہودیوں کے روحانی پیشوا بھی مانے جاتے ہیں۔

روحانی پیشواؤں کو اسرائیلی حکومت کی جانب سے ربی اعظم آف اسرائیل کا سرکاری عہدہ دیا جاتا ہے اور اس کی مدت 10 سال تک ہوتی ہے، جس کے بعد ایک کمیٹی نئے یہودی عالم کو ربی کے طور پر مقرر کرتی ہے۔کورونا وائرس سے ہلاک ہونے والے 79 سالہ یہودی عالم و سابق ربی اعظم علیاہو بخشی دورون 1993 سے 2003 تک سفاردی یہودیوں کے روحانی پیشوا رہے تھے۔

News Code 1899380

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • captcha