ایران، ملائشیا ، ترکی اور قطر کا ڈالر کی جگہ سونے کی کرنسی رائج کرنے پر غور

ملائشیا میں اسلامی ممالک کے اجلاس میں ایران، ملائشیا ، ترکی اور قطر کے رہنماؤں نےڈالر کی جگہ سونے کی کرنسی رائج کرنے پر غورشروع کردیا ہے۔

مہر خبررساں ایجنسی نے الجزیرہ کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ ملائشیا میں اسلامی ممالک کے اجلاس میں ایران، ملائشیا ، ترکی اور قطر کے رہنماؤں نےڈالر کی جگہ سونے کی کرنسی رائج کرنے پر غورشروع کردیا ہے۔ ملائیشیا میں جاری مسلم ممالک کے اجلاس میں عالمی قوتوں کی جانب سے معاشی پابندیوں کا مقابلہ کرنے کے لیے ایکدوسرے کیساتھ تجارت کیلیے سونے کو بطور کرنسی استعمال کرنے کی تجویز پر غور کیا جا رہا ہے۔ اطلاعات کے مطابق وزیراعظم مہاتیر محمد نے انکشاف کیا ہے کہ ملائشیا میں  50 سے زائد مسلم ممالک کے اجلاس  میں ملائیشیا، ترکی، قطر اور ایران ایک دوسرے سے تجارت ڈالر، پاؤنڈ یا یورو کے بجائے سونے یا درہم میں کرنے پر غور کر رہے ہیں۔ ملائشیا کے وزیر اعظم ماتری محمد نے ایران کی تعریف کرتے ہوئے کہا کہ ایران نے امریکہ کے بے پناہ اقتصادی پابندیوں کے باوجود شاندار ترقی کی اور ترقی کے راستے پر گامزن ہے اور ایران مسلم ممالک کے لئے بہترین نمونہ بن سکتا ہے۔ مہاتیر محمد نے کہا کہ ہم ڈالر کے بجائے اشیاء کا تبادلہ بھی کرسکتے ہیں۔

News Code 1896382

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 5 + 2 =