سوڈان میں مظاہرین کا صدر عمر البشیر سے استعفی کا مطالبہ

سوڈان میں صدر عمر البشیر کے خلاف مظاہروں کا س لسلہ جاری ہے جہاں مظاہرین 29 سال سے صدر کے عہدے پر فائز عمر بشیر سے عہدہ چھوڑنے کا مطالبہ کررہے ہیں۔

مہر خبررساں ایجنسی نے فرانسیسی خبررساں ایجنسی کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ سوڈان میں صدر عمر البشیر کے خلاف مظاہروں کا س لسلہ جاری ہے جہاں مظاہرین 29 سال سے صدر کے عہدے پر فائز عمر بشیر سے عہدہ چھوڑنے کا مطالبہ کررہے ہیں۔ پولیس نے صدارتی محل کی جانب مارچ کرنے والے ہزاروں مظاہرین کو منتشر کرنے کے لیےآنسو گیس کے شیل برسائے اور فائرنگ کی۔ اطلاعات کے مطابق سماجی کارکنان اور آن لائن پوسٹ کی جانے والی ویڈیوز میں دیکھا جاسکتا ہے کہ خرطوم ہزاروں افراد کا ہجوم سڑکوں پر جمع ہے اور دریائے نیل کے ساتھ ساتھ مارچ کرتے ہوئے صدارتی محل کی جانب رواں دواں ہے۔

اس کے ساتھ مظاہرین حب الوطنی کے نغمے گا رہے ہیں اور " آزادی " اور " چوروں سے امن " کے نعرے لگاتے ہوئے حکمرانوں کو سبکدوش ہوتے ہوئے دیکھنا چاہتے ہیں۔ مارچ کو روکنے کے لیے خرطوم کی سڑکوں پر بھاری تعداد میں سکیورٹی فورسز کے اہلکار تعینات کیے گئے جبکہ فوجی اہلکار وں نے بکتر بند گاڑیوں میں گشت بھی کیا۔ ذرائع کے مطابق عمر البشیر یمن کے خلاف سعودی عرب کے خونی اتحاد میں شامل ہے جسے یمن میں تاریخی شکست کا سامنا ہے۔

News Code 1886779

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 4 + 10 =