امریکہ ، علاقائی اور عالمی امن و سلامتی کے لئے سنجیدہ خطرہ بن گیا

اسلامی جمہوریہ ایران کے صدر حسن روحانی نے قرقیزستان کے دارالحکومت بیشکک میں شانگہائی سربراہی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا ہے کہ امریکہ ، علاقائی اور عالمی امن و سلامتی کے لئے سنجیدہ خطرہ بن گیا ہے۔

مہر خبررساں ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق اسلامی جمہوریہ ایران کے صدر حسن روحانی نے قرقیزستان کے دارالحکومت بیشکک میں شانگہائی تعاون تنظیم کے سربراہی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا ہے کہ امریکہ ، علاقائی اور عالمی امن و سلامتی کے لئے سنجیدہ خطرہ بن گیا ہے۔ صدر حسن روحانی نے کہا کہ امریکی حکومت نے گذشتہ دو برسوں میں وسیع پیمانے پر بین الاقوامی قوانین کی خلاف ورزی کرتے ہوئے کئی عالمی معاہدوں کو ختم کردیا۔ امریکہ اپنی فوجی، اقتصادی اور مالی برتری سے استفادہ کرتے ہوئے عالمی امن و سلامتی کے لئے سنجیدہ خطرہ بن گیا ہے۔ صدر حسن روحانی نے مشترکہ ایٹمی معاہدے کو اہم عالمی معاہدہ قراردیتے ہوئے کہا کہ گروپ 1+5 اور ایران کے تعاون سے مشترکہ ایٹمی معاہدہ پایہ تکمیل تک پہنچا ۔ مشترکہ ایٹمی معاہدے کے سلسلے میں ہونے والےمذاکرات میں امریکہ بھی شامل تھا۔اس معاہدے پر امریکہ نے بھی دستخط کئے اور پھر امریکہ کے موجودہ صدر اس معاہدے سے خارج ہوگئے۔ صدر حسن روحانی نے کہا کہ ایران علاقائی اور عالمی سطح پر امن و سلامتی کا خواہاں ہے ۔ ایران نے خطے میں امن و سلامتی کے لئے عراق اور شام کی حکومتوں کا تعاون کیا اور خطے میں جاری امریکہ اور اس کے اتحادیوں کی طرف سے تشکیل دیئے گرئے دہشت گرد گروہوں کا مقابلہ کیا۔ انھوں نے کہا کہ ایران نے دہشت گردی کے خاتمہ کے لئے اقوام متحدہ کے ساتھ تعمیری تعاون کیا۔ انھوں نے کہا کہ فارسی زبان ، ایرانی ثقافت اور ایرانی شعراء کی خدمات آج بھی ایشیا اور وسطی ایشیائی ممالک میں نمایاں ہے۔

News Code 1891359

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 7 + 11 =