امریکی صدر کو جنوبی افریقہ کا منہ توڑ جواب

جنوبی افریقہ نے کہا ہے کہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی تنگ نظری سے ماضی کے نسل پرستانہ دور کی یاد تازہ ہو گئی۔

مہر خبررساں ایجنسی نے اسپوٹنک کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ جنوبی افریقہ نے کہا ہے کہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی تنگ نظری سے ماضی کے نسل پرستانہ دور کی  یاد تازہ ہو گئی۔ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے گزشتہ روز اپنی ایک ٹویٹ میں کہا تھا کہ امریکی وزیر خارجہ مائیک پمپئو کو جنوبی افریقہ میں زرعی اصلاحات کے نام پر سفید فام کسانوں کی زمینوں پر قبضے کے معاملے پر نظر رکھنے کی ہدایت کی ہے۔

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے اپنی ٹویٹ میں سفید فام کسانوں کی زمینوں اور فارمز پر قبضے کے علاوہ جنوبی افریقہ کی حکومت پر سفید فام کسانوں کو بڑے پیمانے پر قتل کرنے کا الزام بھی عائد کیا تھا۔ امریکی صدر نے جنوبی افریقہ پر یہ الزامات فاکس نیوز پر نشر ہونے والی ایک رپورٹ کے تناظر میں لگائے۔

جنوبی افریقہ نے ڈونلڈ ٹرمپ کی ٹویٹ پر سخت ردعمل دیتے ہوئے کہا کہ ملکی مفاد میں زرعی اصلاحات جاری رہیں گی اس حوالے سے امریکی صدر کی ٹویٹ غلط اور ناقص معلومات پر مشتمل ہے جس پر امریکی سفیر کو طلب کر کے وضاحت طلب کی جائے گی۔ جنوبی افریقا کی حکومت کے آفیشل ٹویٹر اکاؤنٹ سے بھی امریکی صدر کی ٹویٹ کا جواب دیتے ہوئے کہا گیا کہ امریکی صدر کی تنگ نظری کو مکمل طور پر مسترد کرتے ہیں۔ امریکی صدر کی تنگ نظری کا مقصد جنوب افریقی قوم کو تقسیم کرنا ہے جس سے ماضی میں نسل پرستانہ دور کی یاد تازہ ہو گئی۔

News Code 1883349

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 2 + 1 =