امریکہ علاقائی اور عالمی اقوام کو غلام بنانے کی پالیسی پر گامزن ہے

اسلامی جمہوریہ ایران کے صدر حسن روحانی نے علاقائی اور عالمی سطح پر امریکہ کی منہ زوری اور تسلط پسندانہ پالیسیوں کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ امریکی حکام چاہتے ہیں کہ پوری دنیا امریکی فکر کرنی چاہیے اور امریکی اقدار کا احترام کرنا چاہیے امریکہ علاقائی اور عالمی اقوام کو اپنا غلام بنانا چاہتا ہے۔

مہر خبررساں ایجنسی کے نامہ نگار کی رپورٹ کے مطابق اسلامی جمہوریہ ایران کے صدر حسن روحانی نے 32 ویں عالمی وحدت اسلامی کانفرنس سے خطاب میں  علاقائی اور عالمی سطح پر امریکہ کی منہ زوری اور تسلط پسندانہ پالیسیوں کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ  امریکی حکام چاہتے ہیں کہ پوری دنیا کو امریکہ جیسی  فکر کرنی چاہیے اور امریکی اقدار کا احترام کرنا چاہیے اور اسطرح امریکہ علاقائی اور عالمی اقوام کو اپنا غلام بنانا چاہتا ہے۔

صدر حسن روحانی نے تہران میں  اسلامی ممالک کے سربراہی ہال میں  32 ویں عالمی وحدت اسلامی کانفرنس کے دوسرے دن اسلامی ممالک کے علماء ، دانشوروں، سیاستدانوں  اور محققین کے اجلاس سے خطاب میں عید میلاد النبی صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم اور آنحضور کے فرزند حضرت امام جعفر صادق علیہ السلام کی ولادت باسعادت کی مناسبت سے مبارکباد پیش کرتے ہوئے کہا پیغمبر اسلام (ص) دنیا کے لئے نور ہدایت اور رحمت عالم ہیں ۔ پیغمبر اسلام نے ہمیں اخوت اور برادری کا درس دیا اور انھوں نے ہمیں دیگر اقوام کے ساتھ پرامن رہنے اور جینے کا سبق سکھایا ہے ۔ دین اسلام صرف مسلمان کے احترام کاد ین نہیں بلکہ دین اسلام تمام مسلمانوں اور تمام انسانوں کے اقدار کے احترام کا نام ہے۔

صدر حسن روحانی نے کہا کہ آج تمام مسلمانوں کی ذمہ داری ہے کہ وہ آنحضور (ص) کی نیک سیرت اور خلق عظیم عمل پیرا رہ کر اسلامی اقدار کی حفاظۃ کریں ۔

صدر حسن روحانی نے کہا کہ آج مغرب اور اسلام کی جنگ صرف ایک کلمہ پرمبنی ہے مغربی ممالک اپنے لئے آزادی اور دوسروں کے لئے بردگی چاہتے ہیں جبکہ اسلام سب کے لئے آزادی کا خواہاں ہے۔

صدر حسن روحانی نے کہا کہ آج فلسطین، لیبیا، شام، یمن ، افغانستان اور بعض دیگر علاقوں میں مسلمانوں کو شدید اور سخت مشکلات کا سامنا ہے مسلمانوں کی عالمی اور علاقائي سطح پر عزت اور عظمت اسی میں ہے کہ وہ اس آزادی کو رسمی طور پر تسلیم کریں جو پیغمبر اسلام نے تمام مسلمانوں اور تمام انسانوں کے لئے پیش کی ہے۔

News Code 1885885

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 7 + 5 =