بحرین میں بحرینی ،سعودی جرائم کے بارے میں عالمی تحقیقات کا مطالبہ

انسانی حقوق کی تنظیموں نے بحرین میں آل خلیفہ اور آل سعود کے ہاتھوں بحرینی عوام پروحشیانہ تشدد اور جرائم کے واقعات کی عالمی سطح پر تحقیقات کرانے کا مطالبہ کیا ہے۔

مہر خبررساں ایجنسی نے رائٹرز کے حوالے سے نقل کیا ہے کہانسانی حقوق کی تنظیموں نے بحرین میں آل خلیفہ اور آل سعودکے فوجیوںکے ہاتھوں وحشیانہ تشدد کے واقعات کی عالمی سطح پر تحقیقات کرانے کا مطالبہ کیا ہے۔فزیشنز فور ہیومن رائٹس نامی تنظیم کی رپورٹ کے مطابق جب سے بحرین میں حکومت مخالف مظاہروں کا آغاز ہوا ہے تب سے بتیس ڈاکٹروں کو گرفتار کیا گیا ہے۔ انسانی حقوق کے لیے کام کرنے والی تنظیموں کے مطابق بحرین میں خوف و ہراس کی فضا ہے۔ فزیشنز فور ہیومن رائٹس کے مطابق آدھی رات کو ڈاکٹروں کو گھروں سے نقاب پوش افراد نے اٹھایا ہے۔ حکومت نے جو سیکڑوں افراد حراست میں لیے ہیں ان میں کئی ڈاکٹر بھی ہیں اور ایک مشہور انسانی حقوق کے لیے کام کرنے والا کارکن بھی۔ اس کے علاوہ کئی افراد اپنی ملازمتوں سے اس لیے ہاتھ دھو بیٹھے ہیں کہ انہوں نے مظاہروں میں حصہ لیا۔

تنظیم کے مطابق جن افراد کو حراست میں لیا گیا ہے ان سے کوئی رابطہ نہیں ہے اور نہ ہی یہ معلوم ہے کہ ان کو کہاں رکھا گیا ہے۔ تنظیم کے مطابق حراست میں لیے گئے افراد میں سے چار شہید ہوچکے ہے رپورٹ کے مطابق زخمیوں پر بھی تشد کیا جارہا ہے لوگوں کو بری طرح ہراساں کیا جارہا ہے۔ ادھر عالمی ریڈ کراس نے مارچ میں بحرین حکومت سے حراست میں لیے گئے افراد تک رسائی مانگی تھی لیکن بحرینی حکومت نے اس کی اجازت نہیں دی ہے ذرائع کے مطابق بحرینی اور سعودی حکومتیں ملکر بحرینی مسلمانوں کے خلاف ظلم و ستم کا بازار گرم کئے ہوئے ہیںبحرینی عوام پر مظالم امریکی اشاروں پر کئے جارہے ہیں ذرائع کے مطابق  جس طرح امریکہ اسرائیل کے سنگین جرائم میں ملوث ہے اسی طرح امریکہ آل خلیفہ اور آل سعود کے سنگين جرائم میں بھی ملوث ہے۔ بحرین میں 25 مسجدوں کو شہید اور قرآن کریم کے کئی نسخوں کو جلادیا گیا ہے اور ایک ہزآر سے زائد افراد کو گرفتار کیا گیا ہے۔ ادھر پاکستان، ہندوستان، ترکی، عراق، ایران اور شام میں بحرینی  اور سعودی حکومت کے خلاف عوامی مظاہرے جاری ہیں۔

News Code 1294825

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 3 + 9 =