عالم اسلام پر وہابیت کے برے ، شوم اور گمراہ کن اثرات مرتب ہوئے ہیں

آیت اللہ سبحانی نے وہابیت کے برے ، گمراہ کن اورشوم اثرات کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا ہےکہ 4 سو سال قبل سعودی عرب کے نجد علاقہ میں محمد بن عبد الوہاب نے وہابیت کی بنیاد رکھی اور اس دور میں عثمانی حکومت کی وجہ سے وہابیت کو فروغ نہ مل سکا لیکن عثمانی حکومت کے خاتمہ کے بعد وہابیت کے گمراہ کن پروپیگنڈوں میں زبردست اضافہ ہوا اور انھوں نے سعودی عرب کے تیل سے مالا مال علاقہ پرقبضہ کرکے اپنے نظریات کو پھیلانا شروع کردیا۔

مہر خبررساں ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق آیت سبحانی نے وہابیت کے برے، گمراہ کن اورشوم اثرات کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ 4 سو سال قبل سعودی عرب کے نجد علاقہ میں محمد بن عبد الوہاب نے وہابیت کی بنیاد رکھی اور اس دور میں عثمانی حکومت کی وجہ سے وہابیت کو فروغ نہ مل سکا لیکن عثمانی حکومت کے خاتمہ کے بعد وہابیت کے گمراہ کن پروپیگنڈہ میں زبردست اضافہ ہوا اور انھوں نے سعودی عرب کے تیل سے مالا مال علاقہ پرقبضہ کرکے اپنے نظریات کو پھیلانا شروع کردیا۔ 

آیت اللہ سبحانی نے کہا کہ وہابیت عالمی سامراجی طاقتوں کا آلہ کار گروہ ہے جو عالم اسلام کے لئے زبردست خطرہ ہے یہ گروہ اسلامی قوانین کو اپنی مرضی کے مطابق بیان کرکے اسلام کو کمزور بنانے کی کوشش کررہا ہے۔ انھوں نے کہا کہ وہابیوں نے سعودی عرب پر قبضہ کرنے کے بعدسب سے پہلے تمام اسلامی آثار و نشانات کو بے دردی کے ساتھ مٹا دیا  وہابیوں نےاہلبیت اطہار(ع)  ، ازواج پیغمبر (ص) ، صحابہ کرام اور تابعین کی قبروں کے نشانات کو بھی محو کردیا۔ انھوں نے کہا کہ مسلمانوں کے عقائد کو کمزور کرنے کے لئے وہابیوں نے شکوک و شبہات پیدا کرنا شروع کئے اور مال و دولت کی لالچ دیکر بہت سے لوگوں کو اصلی راستے سے منحرف کرنے میں کامیاب ہوگئے آیت اللہ سبحانی نے کہا کہ آج بھی وہابیت کے شوم ، گمراہ کن اور تباہ کن اثرات کا مشاہدہ کیا جاسکتا ہے وہابی اسلام کے دامن پر بدنما داغ ہیں۔ 

News Code 1045767

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 2 + 11 =