ہم منطقی مذاکرات کی میز سے فرار نہیں کریں گے

اسلامی جمہوریہ ایران کے نامزد وزیر خارجہ نے کہا ہے کہ ہم منطقی مذاکرات کی میز سے فرار نہیں کریں گے اور وزارت خارجہ کو مشترکہ ایٹمی معاہدے سے گرہ بھی نہیں لگائیں گے۔

مہر خبررساں ایجنسی کے نامہ نگار کی رپورٹ کے مطابق اسلامی جمہوریہ ایران کے نامزد وزیر خارجہ حسین امیر عبداللہیان نے کہا ہے کہ ہم منطقی مذاکرات کی میز سے فرار نہیں کریں گے اور وزارت خارجہ کو مشترکہ ایٹمی معاہدے سے گرہ بھی نہیں لگائیں گے۔ اطلاعات کے مطابق ایرانی پارلیمنٹ میں تیرہویں حکومت کے وزراء کو اعتماد کا ووٹ دینے کے سلسلے میں بحث اور تحقیق کا سلسلہ جاری ہے ۔ ایران کے نامزد وزیر خارجہ نے وزارت خارجہ میں اپنے منصوبوں کا دفاع کرتے ہوئے کہا کہ سفارتکاری اور میدانی طاقت دو مضبوط بازو ہیں جن کے ذریعہ قومی اور ملکی مفادات کو تحفظ فراہم کیا جاسکتا ہے۔ ہم عاشورا کے ماننے والے ہیں اور ہم اسلامی ، انقلابی، انسانی اور اخلاقی اقدار کا عالمی سطح پر بھر پور دفاع کریں کریں گے۔

امیر عبداللہیان نے کہا کہ ہم ظالمانہ پابندیوں کو ختم کرانے کے سلسلے میں اپنی تمام توانائیوں اور صلاحیتوں سے استفادہ کریں گے اور اس سلسلے میں ملکی اور قومی مفادات کے تحفظ کے سلسلے میں منطقی اور مفید مذاکرات انجام دیں گے ۔

امیر عبداللہیان نے کہا کہ ہمسایہ ممالک کے ساتھ تعلقات کو مضبوط بنانا ایرانی کی ترجیحی پالیسیوں کا حصہ ہے ہم تمام علاقائی ممالک کے ساتھ دوستی کا ہاتھ بڑھانے کے لئے آمادہ ہیں۔

انھوں نے کہا کہ افغانستان کے امور پر ہماری گہری نظر ہے، افغانستان ہمارا ہمسایہ ملک ہے ہم نے ہمیشہ افغان عوام کی حمایت کی ہے ہم افغان عوام کو تنہا نہیں چھوڑیں گے اور ہم بین الافغانی مذاکرات اور افغانستان میں پائدار امن کے قیام کے سلسلے میں کسی بھی کوشش سے دریغ نہیں کریں گے۔

انھوں نے سعودی عرب کے ساتھ تعلقات کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ تمام مسلمان عربستان کونزول وحی کی سرزمین  سمجھتے ہیں اور ہم سعودی عرب کے ساتھ تعلقات اور تعاون  کو علاقائی مسلمانوں اور خطے کے استحکام کے لئے کافی اہم سمجھتے ہیں۔

News Code 1907895

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 5 + 8 =