کیرالہ میں خاتون ٹیچر کے ساتھ زیادتی کرنے والے پادریوں نے گرفتاری دیدی

ہندوستانی ریاست کیرالہ میں خاتون ٹیچر کو مسلسل ایک سال تک زیادتی کا نشانہ بنانے والے مزید 2 پادریوں نے خود کو قانون کے حوالے کر دیا ہے۔

مہر خبررساں ایجنسی نے ہندوستانی ذرائع کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ ہندوستانی ریاست کیرالہ میں خاتون ٹیچر کو مسلسل ایک سال تک زیادتی کا نشانہ بنانے والے مزید 2 پادریوں نے خود کو قانون کے حوالے کر دیا ہے۔

اطلاعات کے مطابق شادی شدہ خاتون ٹیچر کو بلیک میل کر کے ایک سال تک مسلسل زیادتی کا نشانہ بنانے والے مزید دو پادریوں نے سرنڈر کر دیا ہے۔" ’پادری ابراہام ور گھیسے"  نے تھرو ولا مجسٹریٹ کورٹ اور " پادری جیسی جارج "  نے کرائم برانچ آفس میں خود کو پیش کر دیا۔اس سے قبل  زیادتی کیس میں ملوث تیسرے ملزم پادری جانسن میتھیو کو ان کی رہائش گاہ سے گرفتار کیا جا چکا ہے جب کہ چوتھے ملزم پادری جاب میتھیو نے کولام پولیس اسٹیشن میں خود گرفتاری دے دی تھی۔

خاتون ٹیچر نے چرچ میں پادریوں کے سامنے غلطیوں کا اعتراف کیا۔ تاہم چرچ کے پادریوں نے خاتون کے گناہوں کے اعتراف کو بلیک میلنگ کے لیے استعمال کیا اور ڈرا دھمکا کر کئی بار زیادتی کا نشانہ بناتے رہے۔

ٹیچر نے اپنے شوہر کو صورت حال سے آگاہ کیا جس پر مئی کے پہلے ہفتے میں خاتون ٹیچر کے شوہر نے باقاعدہ شکایت درج کرائی تھی جس میں کہا گیا تھا کہ  چرچ کے 4 پادری اہلیہ کو مختلف اوقات میں زیادتی کا نشانہ بناتے رہے ہیں۔

چرچ نے شکایت موصول ہونے کے بعد چاروں پادریوں کو ذمہ داریوں سے سبکدوش کر کے مقدمے کا فیصلہ آجانے تک تمام اعزازات واپس لے لیے ہیں۔ اگر چاروں پادریوں پر جرم ثابت ہو گیا تو چرچ مستقل طور پر رکنیت ختم کرسکتا ہے۔

News Code 1883037

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 6 + 8 =