تنہائی سے فالج اور امراضِ قلب کے خطرات بڑھ جاتے ہیں

ماہرین نے ایک طویل مطالعے کے بعد کہا ہے کہ تنہائی سے فالج اور امراضِ قلب کے خطرات بڑھ جاتے ہیں اور ماہرین نے معاشرے میں ایسے افراد کے ساتھ وقت گزارنے پر زور دیا ہے۔

مہر خبررسان ایجنسی نے غیر ملکی ذرائع کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ ماہرین نے ایک طویل مطالعے کے بعد کہا ہے کہ تنہائی سے فالج اور امراضِ قلب کے خطرات بڑھ جاتے ہیں اور ماہرین نے معاشرے میں ایسے افراد کے ساتھ وقت گزارنے پر زور دیا ہے۔ اگرچہ سست رفتار زندگی، ورزش کا نہ کرنا اور ذہنی پریشانی اور تناؤ وغیرہ سے فالج اور دل کی بیماریاں جنم لیتی ہیں لیکن تنہائی لوگوں کے لیے تباہ کن ثابت ہوسکتی ہے۔ ماہرین نے تنہائی کے تین انداز سے اثرات پر بحث کی ہیں جن میں برتاؤ، جسمانی اور نفسیاتی اثرات شامل ہیں۔

برطانوی ماہرین نے اس تحقیق کے لیے ڈیڑھ لاکھ سے زائد افراد کا غور سے جائزہ لیا ہے جن میں سے 4 ہزار سے زائد افراد امراض قلب اور 3 ہزار افراد فالج کا شکار ہورہے تھے۔ ماہرین کا کہنا ہے مطالعے سے معلوم ہوا کہ اگر انسان تنہا اور الگ تھلگ رہتا ہے تو اس سے امراضِ قلب کے خطرات 29 فیصد اور فالج کے خطرات 32 فیصد تک بڑھ جاتے ہیں۔

ماہرین کے مطابق اکیلے رہنے سے نیند میں کمی، ڈپریشن اور انسانی عزم کمزور پڑتا ہے۔ اسی طری انسان سگریٹ نوشی اور دیگر بری عادات میں گرفتار ہوسکتا ہے۔ اس کے علاوہ تنہائی بلڈ پریشر میں اضافے اور جسم کے قدرتی دفاعی نظام کو شدید متاثر کرنے کی وجہ بنتی ہے۔ اس کے نتیجے میں اکیلے رہنے والے لوگ قبل از وقت موت سے ہمکنار ہوجاتے ہیں۔

News Code 1863490

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 4 + 1 =