ہندوستان نے ايران سے گيس پائپ لائن كے ہندوستان تك منتقل كرنے كے راستے كو خطرناك قرار ديا

ہندوستان كے تيل كے وزير نے اعلان كيا ہے كہ ايران سے ہندگيس پائپ لائن كے پروجيكٹ كا راستہ خطرناك ہونے كي وجہ سے مشكل ضرور ہے ليكن اس پر گفتگو جاري رہني چاہيے

مہر خبررساں ايجنسي نے اخبار ڈيلي ٹائمز كے حوالے سے نقل كيا ہے كہ پاكستان كي طرف سے اس پائپ لائن كي مكمل حفاظت كي ضمانت كے باوجود ہندوستان شك و ترديد ميں مبتلا ہے ہندوستان كے وزير تيل مني شنكر نے ايك پريس كانفرنس سے خطاب كرتے ہوئے كہا كہ جيسا كہ وزير اعظم نے كہا ہے كہ" اس پائپ لائن كو مشكلات اور خطرات كا سامنا ہے "

گذشتہ ہفتہ بش اور منموہن سنگھ كي باہمي گفتگو كے بعد انھوں نے اس پائپ لائن كو بچھانے كے سلسلے ميں تشويش كا اظہار كيا تھا اور اس بات كا واضح اشارہ ہے كہ ہند كے وزير اعظم مكمل امريكي وعدوں كے دباؤ ميں آگئے ہيں كيونكہ امريكہ نے ہند كے ساتھ اس كے عوض جوہري توانائي كے ميدان ميں تعاون كرنے كا يقين دلايا ہے البت ہندوستان كے وزيرتيل نے كہا ہے كہ امريكہ كا ہند كے ساتھ جوہري تعاون اور اس كا ايران كے جوہري پروگرام كي مخالفت كرنے ميں كوئي ربط نہيں ہے اور يہ دونوں مسئلے الگ الگ ہيں 

News Code 210272

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 1 + 2 =