تہران ميں اقوام متحدہ كي اصلاحات كے بين الاقوامي اجلاس كے نام كوفي عنان كا پيغام

اقوام متحدہ كے سكريٹري جنرل كوفي عنان نے تہران ميں اقوام متحدہ كي اصلاحات كے سلسلے ميں ايران كي وزارت خارجہ ميں ہونے والے اجلاس كے نام كا پيغام اس اميد كا اظہار كيا ہے كہ ايران علاقہ ميں امن و امان برقرار كرنے ميں اپنا اہم نقش ايفا كريگا

مہر خبررساں ايجنسي كي رپورٹ كے مطابق اقوام متحدہ كے سكريٹري جنرل كوفي عنان كے نمائندے ايڈوارڈمورٹيمر نے انكے پيغام كو پڑھ كر سنايا پيغام كا اقتباس حسب ذيل ہے

ميں اپني طرف سے اس اجلاس ميں شركت كرنے والے تمام دوستوں كو درود و سلام پيش كرتا ہوں اور ايران كي وزارت خارجہ كے ريسرچ سينٹر كا شكر گذار ہوں جس نے اس اجلاس كو منعقد كرنے كي زحمت برداشت كي ہے آپ اقوام متحدہ اور عالمي برادري كے لئےايك حساس اور سرنوشت ساز لحظے ميں اكٹھا ہوئے ہيں  ٹھيك ايك ماہ قبل ہم نے اقوام متحدہ كے منشور پر دستخط كرنے كا ساٹھواں جشن منايا ہے ليكن ہماري فكريں اور نگاہيں مستقبل پر لگي ہوئي ہيں نہ ماضي پر ، انھوں نے كہا كہ بڑي سے بڑي اور اہم سے اہم پيشنہاد بھي ہم كو اپنے اہم اور ضروري وظائف سے كہيں دور نہ كردے اور يہ انھيں وظائف كي روشني ميں اقوام متحدہ افغانستان اور عراق ميں ڈيموكريسي اور مستقل حكوتوں كے استقرار اور ان ملكوں ميں امن و اماں كي فضا بحال كرنے كے لئے كوشش كررہي ہے ، فلسطينيوں اور اسرائيل كے مابين عدالت پر مبني صلح و امن كي جد و جہد ميں لگي ہوئي ہے اور ايران بھي ان مشكلات كو حل كرنے ميں بہت بڑا نقش ادا كرسكتا ہے

كوفي عنان نے كہا كہ ميں جمہوري اسلامي ايران كے صدر اور نئے منتخب صدر جناب احمدي نژادكے تعاون كا بڑے شوق و ولولے كے ساتھ منتظر ہوں مجھے ايران كے نئے صدر كے ساتھ ملنے كا بڑا شوق ہے اور يہ ملاقات عالمي رہنماؤں كے 2005 كے اجلاس ميں حتما نصيب ہوگي  انھوں نے كہا كہ تاريخ ميں ايران كے ساتھ ظلم اور نا انصافي ہوئي ہے اور ہم نے ديكھا كہ جب 1980 ميں ايران پر حملہ ہوا تواس وقت ايران كو تنہا چھوڑ ديا گيا اور سلامتي كونسل نے بھي كوئي ٹھوس فيصلہ نہيں كيا 

 

News Code 207576

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 8 + 2 =