امریکہ  کی افغانستان کے خلاف  نیابتی جنگ کی تیاری / طالبان افغانستان کی حقیقت ہے

افغانستان کے امور میں ایرانی صدر کے خصوصی نمائندے نے کہا ہے کہ افغانستان کے موجودہ شرائط کے پیش نظر طالبان افغانستان کی ناقابل انکار حقیقت ہیں دارالحکومت طالبان کے اختیار میں ہے اور طالبان ملک کی سلامتی اور سکیورٹی کے ذمہ د ار ہیں۔

مہر خبررساں ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق افغانستان کے امور میں ایرانی صدر کے خصوصی نمائندے حسن کاظمی قمی نے کہا ہے کہ افغانستان کے موجودہ شرائط کے پیش نظر طالبان افغانستان کی ناقابل انکار حقیقت ہیں۔ دارالحکومت طالبان کے اختیار میں ہے اور طالبان ملک کی سلامتی اور سکیورٹی کے ذمہ د ار ہیں۔

انھوں نے کہا کہ ایران کی قومی سلامتی اور خارجہ پالیسی میں افغانستان کا اہم مقام ہے۔ افغانستان کو اس وقت سخت اور پیچیدہ شرائط کا سامنا ہے ۔ امریکہ نے 20 سال تک افغانستان میں بڑے پیمانے پر تباہی اور بربادی مچائی ہے ۔

کاظمی قمی نے کہا کہ افغانستان میں امن و ثبات کا خطے اور علاقائی امن و ثبات میں اہم کردار ہے ۔ افغانستان کے عوام کو اس وقت غذائی اور طبی اشیاء کی قلت کا سامنا ہے۔ ہمیں افغانستان کے ساتھ تجارت کو فوری طور پر بحال کرنا چاہیے اور افغانستان کے ساتھ سیاسی ، اقتصادی اور تجارتی تعلقات کے فروغ سے اس ملک میں امن و ثبات قائم ہوسکتا ہے۔

ایرانی صدر کے خصوصی نمائندے نے افغانستان میں شیعہ مساجد پرحالیہ بم حملوں کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ افغانستان میں عدم استحکام پیدا کرنے کے پیچھے امریکہ کا ہاتھ ہے ۔ امریکہ اپنے ایجنٹوں کے ذریعہ افغانستان میں مذہبی اور قبائلی فتنہ کو بھڑکانے کی کوشش کررہا ہے۔ امریکہ سے وابستہ دہشت گرد افغانستان میں شیعہ اور سنی کے درمیان اختلافات پیدا کرنے کی کوشش کررہے ہیں۔ کاظمی قمی نے ماسکو اجلاس کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ یہ اجلاس افغانستان کے بارے میں منعقد ہوا اور ہم نے بھی اس میں فعال کردار ادا کیا ہے۔

News Code 1908598

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 3 + 13 =