ایران کی خارجہ اور اقتصادی پالیسی کو مشترکہ ایٹمی معاہدے سے منسلک نہیں کریں گے

اسلامی جمہوریہ ایران کے وزیر خارجہ امیر عبداللہیان نے کہا ہے کہ ہم ملک کی خارجہ اور اقتصادی پالیسی کو مشترکہ ایٹمی معاہدے کے مذاکرات سے منسلک نہیں کریں گے۔

مہر خبررساں ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق اسلامی جمہوریہ ایران کے وزیر خارجہ حسین امیر عبداللہیان نے آئی آر آئی بی کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے کہا ہے کہ ہم ملک کی خارجہ اور اقتصادی پالیسی کو مشترکہ ایٹمی معاہدے کے مذاکرات سے منسلک نہیں کریں گے۔

ایرانی وزیر خارجہ نے ہمسایہ ممالک خاص طور پر آذربائیجان کے ساتھ ایران کے تعلقات کو خوب توصیف کرتے ہوئے کہا کہ ایران کے لئے ہمسایہ ممالک میں امن و استحکام بڑي اہمیت کا حامل ہے ۔ ایران اپنے ہمسایہ ممالک میں امن و صلح کا خواہاں ہے کیونکہ امن و صلح کے سائے میں علاقائی سطح پر اقتصادی اور معاشی تعلقات کو فروغ دیا جاسکتا ہے۔ انھوں نے کہا کہ ایران تمام ممالک کی بین الاقوامی سرحدوں کا احترام کرتا ہے۔ امیر عبداللہیان نے کہا کہ میں نے اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے ضمن ميں آذربائیجان کے وزیر خارجہ سمیت متعدد ممالک کے رہنماؤں کے ساتھ ملاقات اور گفتگو کی ۔ آذربائیجان اور ایران کے تعلقات دوستانہ اور برادرانہ بنیادوں پر استوار ہیں۔ البتہ آذربائیجان اور بعض دیگر ممالک میں اسرائيل کی سرگرمیوں پر ہماری قریبی نظر ہے ۔ اسرائيلی علاقائي ممالک کے درمیان باہمی تعلقات کے فروغ کے خلاف ہے۔

امیر عبداللہیان نے مشترکہ ایٹمی معاہدے کے سلسلے میں مذاکرات کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ ہم مفید مذاکرات چاہتے ہیں ایسے مذاکرات جن میں ایرانی قوم کے مفادات ملحوظ ہوں۔ انھوں نے کہا کہ ہم ایران کی خارجہ پالیسی اور اقتصادی پالیسی کو مشترکہ ایٹمی معاہدے کے مذاکرات سے منسلک نہیں کریں گے۔

News Code 1908381

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 3 + 3 =