امریکہ کی پیروی کرنے سے ایران اور جنوبی کوریا کے تعلقات کو نقصان پہنچا

اسلامی جمہوریہ ایران کے نائب صدر اسحاق جہانگيری نے جنوبی کوریا کے وزیر اعظم کے ساتھ ملاقات میں کہا ہے کہ جنوبی کوریا کی طرف سے امریکہ کی پیروی کی وجہ سے ایران اور جنوبی کوریا کے تعلقات کو نقصان پہنچا ہے۔

مہر خبررساں ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق جنوبی کوریا کے وزیر اعظم چانگ سیہ کیون تہران کے دورے پر ہیں جہاں ایران کے نائب صدر اسحاق جہانگیری نے ان کا سعد آباد محل میں باقاعدہ استقبال کیا۔ ایران کے نائب صدر نے جنوبی کوریا کے وزير اعظم کا استقبال کرنے کے بعد مذاکرات کا آغاز کردیا۔ اسلامی جمہوریہ ایران کے نائب صدر اسحاق جہانگيری نے جنوبی کوریا کے وزیر اعظم کے ساتھ ملاقات میں کہا ہے کہ جنوبی کوریا کی طرف سے امریکہ کی پیروی کی وجہ سے ایران اور جنوبی کوریا کے تعلقات کو نقصان پہنچا ہے۔

جہانگیری نے کہا کہ کئی برسوں سے ایران اور جنوبی کوریا کے تعلقات اچھے اور دوستانہ رہے ہیں۔ اور ایران کےاقتصادی شعبہ میں جنوبی کوریا کی کئی کمپنیاں فعال اور سرگرم رہی ہیں۔ لیکن گذشتہ تین برسوں سے ایران اور جنوبی کوریا کے تعلقات خراب ہوگئے اور اس کی اصل وجہ یہ تھی کہ جنوبی کوریا نے امریکہ کی غیر قانونی اقتصادی پابندیوں کی پیروی کرنا شروع کردی اور ایران کے 7 ارب ڈالر جنوبی کوریا کی بینکوں نے منجمد کردیئے اور حتی جنوبی کوریا کی کمپنیوں نے ایران کو طبی اور غذائی وسائل کی فراہمی بھی روک دی۔ جہانگیری نے کہا کہ ہم جنوبی کوریا کے وزير اعظم کے دورہ ایران کو نیک فال سمجھتے ہیں اور امید ہے کہ جنوبی کوریا اور ایران کے تعلقات پہلی سطح پر پہنچ جائیں گے۔ ایران  کے نائب صدر نے کہا کہ ہمیں جنوبی کوریا کے وزیر اعظم سے ایران کا پیسہ فوری طور پر آزاد کرنے کی توقع ہے ۔

News Code 1906052

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 2 + 8 =