تنزانیا کے صدر کی آخری رسومات میں بھگدڑ مچنے سے 45 افراد ہلاک

تنزانیا کے صدر جان ماغوفولی کی آخری رسومات کے موقع پر دیدار کے لیے بھگدڑ مچ گئی جس کے نتیجے میں 45 افراد کچل کر ہلاک اور 35 زخمی ہوگئے۔

مہر خبررساں ایجنسی نے رائٹرز کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ تنزانیا کے صدر جان ماغوفولی کی آخری رسومات کے موقع پر دیدار کے لیے بھگدڑ مچ گئی جس کے نتیجے میں 45 افراد کچل کر ہلاک اور 35 زخمی ہوگئے۔ اطلاعات کے مطابق تنزانیا کے صدر جان ماغوفولی مبینہ طور پر کورونا سے انتقال کرگئے تھے اور 21 مارچ کو ان کی آخری رسومات ایک اسٹیڈیم میں ادا کی گئی جو صدر کے حامیوں سے کھچا کھچ بھرا ہوا تھا۔

پولیس کے مطابق صدر جان ماغوفولی کے آخری دیدار کے دوران دھکم پیل شروع ہوگئی جس میں 45 افراد کچلے گئے جب کہ 35 افراد زخمی حالت میں زیر علاج ہیں۔ بھگدڑ جگہ نہ ہونے کے باوجود اسٹیڈیم کے اندر داخل ہونے کی کوشش کرنے والوں کی وجہ سے ہوئی۔

تنزانیا کے 61 سالہ صدر ماغوفولی 17 مارچ کو انتقال کرگئے تھے اور ان کی آخری رسومات عوامی سطح پر 21 مارچ کو ایک اسٹیڈیم میں ادا کی گئیں جب کہ تدفن 26 مارچ کو آبائی شہر چٹو میں ہوئی۔

تنزانیا کے صدر کے انتقال کے بعد ملک کی باگ دوڑ نائب صدر سامیہ حسن نے سنبھال لی ہیں جو کہ ملک کی پہلی مسلمان خاتون صدر ہیں۔

News Code 1905888

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 3 + 1 =