پاکستان میں کورونا وائرس کی تیسری لہر خطرناک

پاکستان کے وفاقی وزیر منصوبہ بندی اسد عمر نے کہا ہے کہ ایسا لگ رہا ہے کہ ملک میں کورونا وائرس کی تیسری لہر خطرناک ہے۔

مہر خبررساں ایجنسی نے جیو نیوز کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ پاکستان کے وفاقی وزیر منصوبہ بندی اسد عمر نے کہا ہے کہ ایسا لگ رہا ہے کہ ملک میں کورونا وائرس کی تیسری لہر خطرناک ہے۔

وفاقی وزیر اسد عمر کا کہنا تھا کہ پاکستان میں برطانوی کورونا وائرس " اسٹرین" کے اثرات ہیں، یہ پہلے کے مقابلے میں زیادہ مہلک ہے۔

انہوں نے کہا کہ برطانوی کورونا اسٹرین زیادہ مہلک ہے اس سے اموات کی شرح بھی زیادہ ہے، ویکسینیشن کورونا وبا کا طویل مدتی حل ہے۔

اسد عمر نے مزید کہا کہ لوگ زیادہ سے زیادہ رجسٹریشن کرائیں، ویکیسینشن کے لیے آئیں، ابھی تک 60 سال سے زائد عمر کے صرف 60 فیصد افراد رجسٹر ہوئے ہیں۔

اسد عمر نے یہ بھی کہا کہ ہمارے پاس زیادہ ویکسین موجود ہیں اور لوگ ویکسینیشن کے لیے آ رہے ہیں، ابھی تک کورونا وائرس کے ساڑھے 3 لاکھ ڈوسز استعمال ہوئے، ویکسینیشن میں خاطر خواہ اضافہ کیا جائے گا۔

انہوں نے کہا کہ شروع میں لوگوں نے احتیاطی تدابیر اختیار کیں، پھر سمجھنے لگے کہ شاید کورونا کوئی چیز نہیں ہے، 60 سال سے زائد عمر کے لوگوں کو کورونا ہوجائے تو نتائج سنگین ہوتے ہیں۔

News Code 1905663

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 3 + 8 =