افغانستان اور ایران بارڈر پر آگ لگنے سے کئي آئل ٹینکرز تباہ ہوگئے ہیں

افغانستان اور ایران بارڈر پر درجنوں آئل اور گیس ٹینکرز دھماکے سے پھٹ گئے جس کے نتیجے میں 17 افراد زخمی اور 500 سے زائد گاڑیاں جل کر خاکستر ہوگئیں جبکہ افغانستان حکومت کی درخواست پر ایرانی عملہ مدد کے لئے پہنچ گيا ہے۔

مہر خبررساں ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق افغانستان اور ایران بارڈر پر درجنوں آئل اور گیس ٹینکرز دھماکے سے پھٹ گئے جس کے نتیجے میں 17 افراد زخمی اور 500 سے زائد گاڑیاں جل کر خاکستر ہوگئیں جبکہ افغانستان حکومت کی درخواست پر ایرانی عملہ مدد کے لئے پہنچ گيا ہے۔ 

اطلاعات  کے مطابق افغانستان اور ایران کی سرحد کے نزدیک ہرات میں اسلام قلعہ کے کسٹم آفس میں کھڑے  آئل اور گیس سے بھرے کئی ٹینکرز اچانک زوردار دھماکے سے پھٹ گئے۔

ٹینکرز کے پھٹنے سے آسمان کو چھوتے شعلوں نے آس پاس کی سیکڑوں گاڑیوں کو بھی اپنی لپیٹ میں لے لیا جس کے نتیجے میں 500 سے زائد گاڑیاں شعلوں کی نذر ہوگئیں جب کہ 17 افراد زخمی ہوگئے۔

ہرات کے محکمہ صحت کے ترجمان محمد رفیق شیرزئی نے بتایا کہ اسلام قلعہ کلینک اور ریجنل اسپتال میں 60 زخمیوں کو لایا گیا ہے جن میں سے 11 کی حالت نازک بتائی جارہی ہے تاہم اس واقعے میں جانی نقصان نہیں ہوا۔

دھماکوں سے پھٹ جانے والے آئل ٹینکرز میں لاکھوں ڈالر کی مالیت کا تیل اور گیس موجود تھا۔ ادھر افغانستان کی حکومت نے آگ بجھانے کے سلسلے میں ایرانی حکومت سے مدد طلب کی جس کے بعد ایران نے آگ بجھانے کے لئے امدادی عملہ سرحد کے اس پار بھیج دیا ہے۔

News Code 1905271

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 4 + 5 =