برطانیہ نے وکی لیکس کے بانی جولین اسانج کو امریکہ کے حوالے کرنے سے انکار کردیا

برطانوی عدالت نے جاسوسی کے الزام میں زیر حراست وکی لیکس کے بانی جولین اسانج کی حوالگی کی امریکی درخواست کو مسترد کردیا ہے۔

مہر خبررساں ایجنسی نے رائٹرز کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ برطانوی عدالت نے جاسوسی کے الزام میں زیر حراست وکی لیکس کے بانی جولین اسانج کی حوالگی کی امریکی درخواست کو مسترد کردیا ہے۔

اطلاعات کے مطابق برطانوی عدالت نے اپنے فیصلے میں وکی لیکس کے بانی کو امریکہ منتقل کرنے کے اجازت دینے سے انکار کرتے ہوئے کہا کہ جاسوسی کے الزامات کا سامنا کرنے والے جولین اسانج کی صحت اس بات کی اجازت نہیں  دیتی کہ انہیں امریکہ منتقل کیا جائے جہاں انہیں ذہنی دباؤ کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔

ضلعی جج وینیسا بارائٹسر نے اپنے فیصلے میں مزید لکھا کہ وکی لیکس کے بانی کی بگڑتی طبیعت کو نظر انداز کرتے ہوئے انہیں امریکہ کے حوالے کرنا جابرانہ عمل ہوگا۔

جولیان اسانج نے 7 برس لندن میں ایکویڈور کے سفارت خانے میں پناہ لیے رکھنے کے بعد دسمبر 2010 میں خود کو گرفتاری کے لیے پیش کردیا تھا جس کے بعد سے وہ انتہائی سکیورٹی والی جیل ایچ ایم پی بیلمارش جیل میں قید ہیں۔

واضح رہے کہ وکی لیکس کے بانی پر 18 سنگین نوعیت کے الزامات ہیں جن میں امریکی فوج کے اہم دستاویزات تک رسائی حاصل کرنا اور انہیں عام کرنا بھی شامل ہے اور اسی بنیاد پر امریکہ نے جولیان کی حوالگی کی درخواست کی تھی۔

News Code 1904677

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 9 + 3 =