چين  میں کورونا سے متعلق خبر شائع کرنے والی صحافی خاتون کو 4 سال قید کی سزا

چین میں کورونا وائرس سے متعلق خبریں روکنے کرنے اور سست ردعمل پر حکومت کو تنقید کا نشانہ بنانے والی 37 سالہ خاتون صحافی ژانگ ژان کو 4 سال قید کی سزا سنائی گئی ہے۔

مہر خبررساں ایجنسی نے غیر ملکی ذرائع کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ چین میں کورونا وائرس سے متعلق خبریں روکنے کرنے اور سست ردعمل پر حکومت کو تنقید کا نشانہ بنانے والی 37 سالہ خاتون صحافی ژانگ ژان کو 4 سال قید کی سزا سنائی گئی ہے۔ اطلاعات کے مطابق چین میں 37 سالہ خاتون ژانگ ژان کو 4 سال قید کی سزا سنائی گئی ہے، خاتون صحافی پر اپنی خبروں کے ذریعے تنازعات کو ہوا دینے اور بدامنی پیدا کرنے کا الزام تھا۔

خاتون صحافی نے گزشتہ برس فروری میں ہی ایک پُراسرار وائرس کے پھیلاؤ کا انکشاف کیا تھا اور ان کی تحقیقاتی رپورٹس سوشل میڈیا پر وائرل بھی ہوئی تھیں جن میں حکومتی سست ردعمل پر کڑی تنقید کی گئی تھی۔ رواں برس مئی میں صحافی کو حراست میں بھی لے لیا گیا تھا۔ دوران حراست خاتون صحافی نے تادم مرگ بھوک ہڑتال بھی کی تھی تاہم سکیورٹی اہلکاروں نے عدالت کے حکم پر صحافی کو میڈیکل ٹیوب لگا کر زبردستی کھانا دیا جاتا تھا۔

ووہان میں پُراسرار وائرس کے پھیلاؤ سے متعلق سوشل میڈیا پر سب سے پہلے اطلاع دینے والے ڈاکٹر کو بھی پولیس نے گزشتہ برس حراست میں لے لیا تھا تاہم بعد میں رہا کردیا تھا اور بدقسمتی سے وہ بھی کورونا کا شکار ہو کر اپنی جان کی بازی ہار گئے تھے۔

News Code 1904575

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 6 + 11 =